Make your own free website on Tripod.com

Adab Nama       Short Stories      Children's Stories   8Indian Languages    Novel     Work of Kalidas

Urdu 's Great Poet

Mirza Asadullah Khan Ghalib

Mirza Ghalib 's

Complet Poetry

Diwan-e- Ghalib

Now Read online

Web By :- M.Mubin

 

 

 

دیوانِ غالبؔ

مرزا اسداللہ خان غالبؔ

 

تصحیح شدہ و اضافہ شدہ نسخہ

(نسخۂ اردو ویب ڈاٹ آرگ)

 

 

 

 


 

بارے اس نسخےکے

ہم ماہرینِ غالبیات ہونےکا دعویٰ نہیں کرتے اور نہ ہمارا یہ خیال ہے کہ ہمیں محقّقین میں شمار کیا جاۓ۔ اردو ویب ڈاٹ آرگ کے کچھ سر پھرے رضاکاروں نے بس یہ بیڑا اٹھایا کہ دیوانِ غالبؔ کو اردو تحریر کی شکل میں مہیا کیا جاۓ۔ اور پھر یہ کوشش رہی کہ زیادہ سے زیادہ کلام یہاں یک جا ہو سکے۔ محض مروّجہ دیوان کے علاوہ بھی ع جو کچھ ملے، جہاں سے ملے، جس قدر ملے۔ بس کوشش کی ہے کہ کلام غالبؔ کا ہی ہو، کسی اور اسدؔ کا نہ ہو کہ یہ شعر بھی شامل کر دیا جاۓ ۔۔۔۔

اسدؔ اس جفا پر بتوں سے وفا کی

مرے شیر شاباش رحمت خدا کی

جس پر غالبؔ کے الفاظ یہ تھے کہ یہ شعر میرا ہے تو مجھ پر لعنت، اور جس اسدؔ کا ہے اس پہ خدا کی رحمت۔ بہر حال اس کوشش کے پیچھے جن باتوں کا خیال رکھا گیا ہے، وہ ذیل میں دی جا رہی ہیں:

اس کی بنیاد نسخۂ نظامی ہے جو نظامی پریس کانپور سے 1862ء میں چھپا تھا اور جس کی تصحیح خود غالبؔ کے ہاتھوں ہوئی تھی۔ کچھ اشعار جو دوسرے مروجہ دیوانوں میں مختلف پاۓ جاتے ہیں، اس کی صحت اس نسخے کی مدد سے ٹھیک کی گئی ہے۔ اس کے علاوہ دوسرے نسخوں (حمیدیہ، غلام رسول مہرؔ، عرشیؔ) سے وہاں مدد لی گئی ہے جو اشعار نظامی میں نہیں تھے۔

اس نسخے کی ایک مزید خصوصیت یہ ہے کہ اس میں جدید املا کا خیال رکھاگیا ہے۔ چناں چہ کچھ الفاظ کی املا جو یہاں ہے، ان کی فہرست ذیل میں ہے:

کیونکر ۔۔۔۔۔۔۔ کی جگہ۔۔۔۔۔۔۔ کیوں کر

ہاے ۔۔۔۔۔۔۔ کی جگہ۔۔۔۔۔۔۔ ہاۓ

سخت جانیہاے ۔۔۔۔۔۔۔ کی جگہ۔۔۔۔۔۔۔ سخت جانی ہاۓ

پانو ۔۔۔۔۔۔۔ کی جگہ۔۔۔۔۔۔۔ پاؤں

بے کسیِ۔۔۔۔۔۔۔ کی جگہ۔۔۔۔۔۔۔ بے کسئِ

اگر پھر بھی کوئی غلطی کسی قاری کو نظر آۓ تو ہمیں اطلاع دیں، اگر قابلِ قبول ہوئی تو ہم بسرو چشم اسے قبول کریں گے اور تصحیح کے بعد یہ ای بک دوبارہ آپ کی خدمت میں پیش کی جا سکے گی۔

 

ترتیب و تحقیق: اعجاز عبید، جویریہ مسعود

ٹائپنگ:اردو ویب ڈاٹ آرگ ٹیم۔۔۔اعجاز اختر (اعجاز عبید) ، سیدہ شگفتہ ، نبیل نقوی ، شعیب افتخار (فریب)، محب علوی، رضوان ، شمشاد

تصحیح و اضافہ: جویریہ مسعود، اعجاز عبید

 

20 جون 2006


 

 

الف

 

1۔

 

نقش فریادی ہےکس کی شوخئ تحریر کا
کاغذی ہے پیرہن ہر پیکرِ تصویر کا
کاوکاوِ سخت جانی ہائے تنہائی نہ پوچھ
صبح کرنا شام کا، لانا ہے جوئے شیر کا
جذبۂ بے اختیارِ شوق دیکھا چاہیے
سینۂ شمشیر سے باہر ہے دم شمشیر کا
آگہی دامِ شنیدن جس قدر چاہے بچھائے
مدعا عنقا ہے اپنے عالمِ تقریر کا
بس کہ ہوں غالب
ؔ، اسیری میں بھی آتش زیِر پا
موئے آتش دیدہ ہے حلقہ مری زنجیر کا

2۔

 

جراحت تحفہ، الماس ارمغاں، داغِ جگر ہدیہ

مبارک باد اسدؔ، غمخوارِ جانِ دردمند آیا

 

3۔

 

جز قیس اور کوئی نہ آیا بروئے کار

صحرا، مگر، بہ تنگئ چشمِ حُسود تھا

آشفتگی نے نقشِ سویدا کیا درست

ظاہر ہوا کہ داغ کا سرمایہ دود تھا

تھا خواب میں خیال کو تجھ سے معاملہ

جب آنکھ کھل گئی نہ زیاں تھا نہ سود تھا

لیتا ہوں مکتبِ غمِ دل میں سبق ہنوز

ڈھانپا کفن نے  داغِ عیوبِ برہنگی

میں، ورنہ ہر لباس میں ننگِ  وجود تھا

تیشے بغیر مر نہ سکا کوہکن اسدؔ

سرگشتۂ خمارِ  رسوم و قیود تھا

4۔

 

کہتے ہو نہ دیں گے ہم دل اگر پڑا پایا

دل کہاں کہ گم کیجیے؟ ہم نے مدعا پایا

عشق سے طبیعت نے زیست کا مزا پایا

درد کی دوا پائی، درد بے دوا پایا

دوست دارِ دشمن ہے! اعتمادِ دل معلوم

آہ بے اثر دیکھی، نالہ نارسا پایا

سادگی و پرکاری، بے خودی و ہشیاری

حسن کو تغافل میں جرأت آزما پایا

غنچہ پھر لگا کھلنے، آج ہم نے اپنا دل

خوں کیا ہوا دیکھا، گم کیا ہوا پایا

حال دل نہیں معلوم، لیکن اس قدر یعنی

ہم نے بار ہا ڈھونڈھا، تم نے بارہا پایا

شورِ پندِ ناصح نے زخم پر نمک چھڑکا

آپ سے کوئی پوچھے تم نے کیا مزا پایا

 

5۔

 

ہے کہاں تمنّا کا دوسرا قدم یا رب

ہم نے  دشتِ امکاں کو ایک نقشِ پا پایا

 

 

6۔

 

دل میرا سوز ِنہاں سے بے محابا جل گیا

آتش خاموش کی مانند، گویا جل گیا

دل میں ذوقِ وصل و یادِ یار تک باقی نہیں

آگ اس گھر میں لگی ایسی کہ جو تھا جل گیا

میں عدم سے بھی پرے ہوں، ورنہ غافل! بارہا

میری آہِ آتشیں سے بالِ عنقا جل گیا

عرض کیجئے جوہرِ اندیشہ کی گرمی کہاں؟

کچھ خیال آیا تھا وحشت کا، کہ صحرا جل گیا

دل نہیں، تجھ کو دکھاتا ورنہ، داغوں کی بہار

اِس چراغاں کا کروں کیا، کارفرما جل گیا

میں ہوں اور افسردگی کی آرزو، غالبؔ! کہ دل

دیکھ کر طرزِ  تپاکِ  اہلِ دنیا جل گیا

 

7۔

 

شوق، ہر رنگ  رقیبِ سروساماں نکلا

قیس تصویر کے پردے میں بھی عریاں نکلا

زخم نے داد نہ دی تنگئ دل کی یارب

تیر بھی سینۂ بسمل سے پَرافشاں نکلا

بوئے گل، نالۂ دل، دودِ چراغِ محفل

جو تری بزم سے نکلا، سو پریشاں نکلا

دلِ حسرت زدہ تھا مائدۂ لذتِ درد

کام یاروں کا بہ قدرٕ لب و دنداں نکلا

اے نو آموزِ فنا  ہمتِ دشوار پسند!

سخت مشکل ہے کہ یہ کام بھی آساں نکلا

دل میں پھر گریے نے اک شور اٹھایا غالبؔ

آہ جو قطرہ نہ نکلا تھا سُو طوفاں نکلا

۔۔۔۔۔

نسخۂ حمیدیہ میں مزید شعر:

شوخئِ رنگِ حنا خونِ وفا سے کب تک

آخر اے عہد شکن! تو بھی پشیماں نکلا

 

8۔

 

دھمکی میں مر گیا، جو نہ بابِ نبرد تھا

"عشقِ نبرد پیشہ" طلبگارِ مرد تھا

تھا زندگی میں مرگ کا کھٹکا لگا ہوا

اڑنے سے پیشتر بھی، مرا رنگ زرد تھا

تالیفِ نسخہ ہائے وفا کر رہا تھا میں

مجموعۂ خیال ابھی فرد فرد تھا

دل تاجگر، کہ ساحلِ دریائے خوں ہے اب

اس رہ گزر میں جلوۂ گل، آگے گرد تھا

جاتی ہے کوئی کشمکش اندوہِ عشق کی !

دل بھی اگر گیا، تو وُہی دل کا درد تھا

احباب  چارہ سازئ وحشت نہ کر سکے

زنداں میں بھی خیال، بیاباں نورد تھا

یہ لاشِ بے کفن اسدؔ خستہ جاں کی ہے

حق مغفرت کرے عجب آزاد مرد تھا

 

9۔

 

شمار سبحہ،" مرغوبِ بتِ مشکل" پسند آیا

تماشائے بہ یک کف بُردنِ صد دل، پسند آیا

بہ فیضِ بے دلی، نومیدئ جاوید آساں ہے

کشائش کو ہمارا عقدۂ مشکل پسند آیا

ہوائے سیرِگل، آئینۂ بے مہرئ قاتل

کہ اندازِ بخوں غلطیدنِ*بسمل پسند آیا

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

*  اصل نسخۂ نظامی میں غلتیدن ہے جو سہوِ کتابت ہے

 

10۔

 

دہر میں نقشِ وفا وجہ ِتسلی نہ ہوا

ہے یہ وہ لفظ کہ شرمندۂ معنی نہ ہوا

سبزۂ خط سے ترا کاکلِ سرکش نہ دبا

یہ زمرد بھی حریفِ دمِ افعی نہ ہوا

میں نے چاہا تھا کہ اندوہِ وفا سے چھوٹوں

وہ ستمگر مرے مرنے پہ بھی راضی نہ ہوا

دل گزر گاہ خیالِ مے و ساغر ہی سہی

گر نفَس جادۂ سرمنزلِ تقوی نہ ہوا

ہوں ترے وعدہ نہ کرنے پر بھی راضی کہ کبھی

گوش  منت کشِ گلبانگِ تسلّی نہ ہوا

کس سے محرومئ قسمت کی شکایت کیجیے

ہم نے چاہا تھا کہ مر جائیں، سو وہ بھی نہ ہوا

مر گیا صدمۂ یک جنبشِ لب سے غالبؔ

ناتوانی سے حریف دمِ عیسی  نہ ہوا

 

نسخۂ حمیدیہ میں مزید:

وسعتِ رحمتِ حق دیکھ کہ بخشا جاۓ

مجھ سا کافرکہ جو ممنونِ معاصی نہ ہوا

 

11۔

 

ستایش گر ہے زاہد ، اس قدر جس باغِ رضواں کا

وہ اک گلدستہ ہے ہم بیخودوں کے طاقِ نسیاں کا

بیاں کیا کیجئے بیدادِکاوش ہائے مژگاں کا

کہ ہر یک قطرہء خوں دانہ ہے تسبیحِ مرجاں کا

نہ آئی سطوتِ قاتل بھی مانع ، میرے نالوں کو

لیا دانتوں میں جو تنکا ، ہوا ریشہ نَیَستاں کا

دکھاؤں گا تماشہ ، دی اگر فرصت زمانے نے

مِرا ہر داغِ دل ، اِک تخم ہے سروِ چراغاں کا

کیا آئینہ خانے کا وہ نقشہ تیرے جلوے نے

کرے جو پرتوِ خُورشید عالم شبنمستاں کا

مری تعمیر میں مُضمر ہے اک صورت خرابی کی

ہیولٰی برقِ خرمن کا ، ہے خونِ گرم دہقاں کا

اُگا ہے گھر میں ہر سُو سبزہ ، ویرانی تماشہ کر

مدار اب کھودنے پر گھاس کے ہے، میرے درباں کا

خموشی میں نہاں ، خوں گشتہ* لاکھوں آرزوئیں ہیں

چراغِ مُردہ ہوں ، میں بے زباں ، گورِ غریباں کا

ہنوز  اک  "پرتوِ نقشِ خیالِ یار" باقی ہے

دلِ افسردہ ، گویا، حجرہ ہے یوسف کے زنداں کا

نہیں معلوم ، کس کس کا لہو پانی ہوا ہوگا

قیامت ہے سرشک آلودہ ہونا تیری مژگاں کا

نظر میں ہے ہماری جادۂ  راہِ فنا غالبؔ

کہ یہ شیرازہ ہے عالَم کے اجزائے پریشاں کا

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* نسخۂ حسرت موہانی میں سرگشتہ

 

12۔

 

نہ ہوگا "یک بیاباں ماندگی" سے ذوق کم میرا

حبابِ موجۂ رفتار ہے نقشِ قدم میرا

محبت تھی چمن سے لیکن اب یہ بے دماغی ہے

کہ موجِ بوئے گل سے ناک میں آتا ہے دم میرا

 

13۔

 

سراپا رہنِ عشق و ناگزیرِ الفتِ ہستی

عبادت برق کی کرتا ہوں اور افسوس حاصل کا

بقدرِ ظرف ہے ساقی! خمارِ تشنہ کامی بھی

جوتو  دریائے مے ہے، تو میں خمیازہ ہوں ساحل کا

 

14۔

 

محرم نہیں ہے تو ہی نوا ہائے راز کا

یاں ورنہ جو حجاب ہے، پردہ ہے ساز کا

رنگِ شکستہ صبحِ بہارِ نظارہ ہے

یہ وقت ہے شگفتنِ گل ہائے ناز کا

تو اور سوئے غیر  نظرہائے تیز تیز

میں اور دُکھ تری مِژہ ہائے دراز کا

صرفہ ہے ضبطِ آہ میں میرا، وگرنہ میں

طُعمہ ہوں ایک ہی نفَسِ جاں گداز کا

ہیں بسکہ جوشِ بادہ سے شیشے اچھل رہے

ہر گوشۂ بساط ہے سر شیشہ باز کا

کاوش کا دل کرے ہے تقاضا کہ ہے ہنوز

ناخن پہ قرض اس گرہِ نیم باز کا

تاراجِ کاوشِ غمِ ہجراں ہوا، اسدؔ!

سینہ، کہ تھا دفینہ گہر ہائے راز کا

 

 

15۔

 

بزمِ شاہنشاہ میں اشعار کا دفتر کھلا

رکھیو یارب یہ درِ گنجینۂ گوہر کھلا

شب ہوئی، پھر انجمِ رخشندہ کا منظر کھلا

اِس تکلّف سے کہ گویا بتکدے کا در کھلا

گرچہ ہوں دیوانہ، پر کیوں دوست کا کھاؤں فریب

آستیں میں دشنہ پنہاں، ہاتھ میں نشتر کھلا

گو نہ سمجھوں اس کی باتیں، گونہ پاؤں اس کا بھید

پر یہ کیا کم ہے؟ کہ مجھ سے وہ پری پیکر کھلا

ہے خیالِ حُسن میں حُسنِ عمل کا سا خیال

خلد کا اک در ہے میری گور کے اندر کھلا

منہ نہ کھلنے پرہے وہ عالم کہ دیکھا ہی نہیں

زلف سے بڑھ کر نقاب اُس شوخ کے منہ پر کھلا

در پہ رہنے کو کہا، اور کہہ کے کیسا پھر گیا

جتنے عرصے میں مِرا لپٹا ہوا بستر کھلا

کیوں اندھیری ہے شبِ غم، ہے بلاؤں کا نزول

آج اُدھر ہی کو رہے گا دیدۂ اختر کھلا

کیا رہوں غربت میں خوش، جب ہو حوادث کا یہ حال

نامہ لاتا ہے وطن سے نامہ بر اکثر کھلا

اس کی امّت میں ہوں مَیں، میرے رہیں کیوں کام بند

واسطے جس شہ کے غالبؔ! گنبدِ بے در کھلا

 

16۔

 

شب کہ برقِ سوزِ دل سے زہرۂ ابر آب تھا

شعلۂ جوّالہ ہر اک حلقۂ گرداب تھا

واں کرم کو عذرِ بارش تھا عناں گیرِ خرام

گریے سے یاں پنبۂ بالش کفِ سیلاب تھا

واں خود آرائی کو تھا موتی پرونے کا خیال

یاں ہجومِ اشک میں تارِ نگہ نایاب تھا

جلوۂ گل نے کیا تھا واں چراغاں آب جو

یاں رواں مژگانِ چشمِ تر سے خونِ ناب تھا

یاں سرِ پرشور بے خوابی سے تھا دیوار جو

واں وہ فرقِ ناز محوِ بالشِ کمخواب تھا

یاں نفَس کرتا تھا روشن، شمعِ بزمِ بےخودی

جلوۂ گل واں بساطِ صحبتِ احباب تھا

فرش سے تا عرش واں طوفاں تھا موجِ رنگ کا

یاں زمیں سے آسماں تک سوختن کا باب تھا

ناگہاں اس رنگ سے خوں نابہ ٹپکانے لگا

دل کہ ذوقِ کاوشِ ناخن سے لذت یاب تھا

 

17۔

 

نالۂ دل میں شب اندازِ اثر نایاب تھا

تھا سپندِبزمِ وصلِ غیر ، گو بیتاب تھا

مَقدمِ سیلاب سے دل کیا نشاط آہنگ ہے !

خانۂ عاشق مگر سازِ صدائے آب تھا

نازشِ ایّامِ خاکستر نشینی ، کیا کہوں

پہلوئے اندیشہ ، وقفِ بسترِ سنجاب تھا

کچھ نہ کی اپنے جُنونِ نارسا نے ، ورنہ یاں

ذرّہ ذرّہ روکشِ خُرشیدِ عالم تاب تھا

 

ق

 

آج کیوں پروا نہیں اپنے اسیروں کی تجھے ؟

کل تلک تیرا بھی دل مہرووفا کا باب تھا

یاد کر  وہ دن کہ ہر یک حلقہ تیرے دام کا

انتظارِ صید میں اِک دیدۂ بیخواب تھا

میں نے روکا رات غالبؔ کو ، وگرنہ دیکھتے

اُس کے سیلِ گریہ میں ، گردُوں کفِ سیلاب تھا

 

18۔

 

ایک ایک قطرے کا مجھے دینا پڑا حساب

خونِ جگر  ودیعتِ مژگانِ یار تھا

اب میں ہوں  اور ماتمِ یک شہرِ آرزو

توڑا جو تو نے آئینہ،  تمثال دار تھا

گلیوں میں میری نعش کو کھینچے پھرو، کہ میں

جاں دادۂ ہوائے سرِ رہگزار تھا

موجِ سرابِ دشتِ وفا کا نہ پوچھ حال

ہر ذرہ، مثلِ جوہرِ تیغ، آب دار تھا

کم جانتے تھے ہم بھی غمِ عشق کو، پر اب

دیکھا تو کم ہوئے پہ غمِ روزگار تھا

 

19۔

 

بسکہ دشوار ہے ہر کام کا آساں ہونا

آدمی کو بھی میسر نہیں انساں ہونا

گریہ چاہے ہے خرابی مرے کاشانے کی

در و دیوار سے ٹپکے ہے بیاباں ہونا

واۓ دیوانگئ شوق کہ ہر دم مجھ کو

آپ جانا اُدھر اور آپ ہی حیراں* ہونا

جلوہ از بسکہ تقاضائے نگہ کرتا ہے

جوہرِ آئینہ بھی چاہے ہے مژگاں ہونا

عشرتِ قتل گہِ اہل تمنا، مت پوچھ

عیدِ نظّارہ ہے شمشیر کا عریاں ہونا

لے گئے خاک میں ہم داغِ تمنائے نشاط

تو ہو اور آپ بہ صد رنگِ گلستاں ہونا

عشرتِ پارۂ دل، زخمِ تمنا کھانا

لذت ریشِ جگر، غرقِ نمکداں ہونا

کی مرے قتل کے بعد اس نے جفا سے توبہ

ہائے اس زود پشیماں کا پشیماں ہونا

حیف اُس چار گرہ کپڑے کی قسمت غالبؔ!

جس کی قسمت میں ہو عاشق کا گریباں ہونا

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* نسخۂ طاہر میں " پریشاں"

 

20۔

 

شب خمارِ شوقِ ساقی رستخیز اندازہ تھا

تا محیطِ بادہ صورت خانۂ خمیازہ تھا

یک قدم وحشت سے درسِ دفتر امکاں کھلا

جادہ، اجزائے دو عالم دشت کا شیرازہ تھا

مانعِ وحشت خرامی ہائے لیلےٰ کون ہے؟

خانۂ مجنونِ صحرا گرد بے دروازہ تھا

پوچھ مت رسوائیِ اندازِ استغنائے حسن

دست مرہونِ حنا، رخسار رہنِ غازہ تھا

نالۂ دل نے دیئے اوراقِ لختِ دل بہ باد

یادگارِ نالہ  اک دیوانِ بے شیرازہ تھا

 

21۔

 

دوست غمخواری میں میری سعی فرمائیں گے کیا

زخم کے بھرنے تلک ناخن نہ بڑھ جائیں گے کیا

بے نیازی حد سے گزری بندہ پرور، کب تلک

ہم کہیں گے حالِ دل، اور آپ فرمائیں گے 'کیا'؟

حضرتِ ناصح گر آئیں، دیدہ و دل فرشِ راہ

کوئی مجھ کو یہ تو سمجھا دو کہ سمجھائیں گے کیا؟

 آج واں تیغ و کفن باندھے ہوئے جاتا ہوں میں

عذر میرے قتل کرنے میں وہ اب لائیں گے کیا

گر کیا ناصح نے ہم کو قید، اچھا یوں سہی

یہ جنونِ عشق کے انداز چھٹ جائیں گے کیا

خانہ زادِ زلف ہیں، زنجیر سے بھاگیں گے کیوں

ہیں گرفتارِ وفا، زنداں سے گھبرائیں گے کیا

ہے اب اس معمورے میں قحطِ غمِ الفت اسدؔ

ہم نے یہ مانا کہ دلّی میں رہیں، کھائیں گے کیا؟

 

22۔

 

یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصالِ یار ہوتاا

اگر  اور  جیتے رہتے ، یہی انتظار ہوتا

ترے وعدے پر جئے ہم تو یہ جان جھوٹ جانا

کہ خوشی سے مر نہ جاتے، اگر اعتبار ہوتا

تری نازکی سے جانا کہ بندھا تھا عہد بودا

کبھی تو نہ توڑ سکتا  اگر  استوار  ہوتا

کوئی میرے دل سے پوچھے ترے تیرِ نیم کش کو

یہ خلش کہاں سے ہوتی، جو جگر کے پار ہوتا

یہ کہاں کی دوستی ہے کہ بنے ہیں دوست نا صح

کوئی چارہ ساز ہوتا، کوئی غم گسار ہوتا

رگِ سنگ سے ٹپکتا وہ لہو کہ پھر نہ تھمتا

جسے غم سمجھ رہے ہو، یہ اگر شرار ہوتا

غم اگر چہ جاں گسل ہے پہ کہاں بچیں کہ دل ہے

غمِ عشق گر نہ ہوتا، غم روزگار  ہوتا

کہوں کس سے میں کہ کیا ہے؟شب غم بری بلا ہے

مجھے کیا برا تھا مرنا، اگر ایک بار ہوتا

ہوئے مر کے ہم جو رسوا، ہوئے کیوں نہ غرق دریا؟

نہ کبھی جنازہ اٹھتا نہ کہیں مزار ہوتا

اسے کون دیکھ سکتا،  کہ یگانہ ہے وہ یکتا

جو دوئی کی بو بھی ہوتی تو کہیں دو چار ہوتا

یہ مسائل تصّوف یہ ترا بیان غالبؔ

تجھے ہم ولی سمجھتے ،جو نہ بادہ خوار ہوتا

 

23۔

 

ہوس کو ہے نشاطِ کار کیا کیا

نہ ہو مرنا تو جینے کا مزا کیا

تجاہل پیشگی سے مدعا کیا

کہاں تک اے سراپا ناز  کیا کیا؟

نوازش ہائے بے جا دیکھتا ہوں

شکایت ہائے رنگیں کا گلا کیا

نگاہِ بے محابا چاہتا ہوں

تغافل ہائے تمکیں آزما کیا

فروغِ شعلۂ خس یک نفَس ہے

ہوس کو پاسِ ناموسِ وفا کیا

نفس موجِ محیطِ بیخودی ہے

تغافل ہائے ساقی کا گلا کیا

دماغِ عطر پیراہن نہیں ہے

غمِ آوارگی ہائے صبا کیا

دلِ ہر قطرہ ہے سازِ انا البحر

ہم اس کے ہیں، ہمارا پوچھنا کیا

محابا کیا ہے، مَیں ضامن، اِدھر دیکھ

شہیدانِ نگہ کا خوں بہا کیا

سن اے غارت گرِ جنسِ وفا، سن

شکستِ قیمتِ دل کی صدا کیا

کیا کس نے جگرداری کا دعویٰ؟

شکیبِ خاطرِ عاشق بھلا کیا

یہ قاتل وعدۂ صبر آزما کیوں؟

یہ کافر فتنۂ طاقت ربا کیا؟

بلائے جاں ہے غالبؔ اس کی ہر بات

عبارت کیا، اشارت کیا، ادا کیا!

 

24۔

 

درخورِ قہر و غضب جب کوئی ہم سا نہ ہوا

پھر غلط کیا ہے کہ ہم سا کوئی پیدا نہ ہوا

بندگی میں بھی وہ آزادہ و خودبیں ہیں، کہ ہم

الٹے پھر آئے، درِ کعبہ اگر وا نہ ہوا

سب کو مقبول ہے دعویٰ تری یکتائی کا

روبرو کوئی بتِ آئینہ سیما نہ ہوا

 کم نہیں نازشِ ہمنامئ چشمِ خوباں

تیرا بیمار، برا کیا ہے؟ گر اچھا نہ ہوا

سینے کا داغ ہے وہ نالہ کہ لب تک نہ گیا

خاک کا رزق ہے وہ قطرہ کہ دریا نہ ہوا

نام کا میرے ہے جو دکھ کہ کسی کو نہ ملا

کام میں میرے ہے جو فتنہ کہ برپا نہ ہوا*

ہر بُنِ مو سے دمِ ذکر نہ ٹپکے خونناب

حمزہ کا قِصّہ ہوا، عشق کا چرچا نہ ہوا

قطرے میں دجلہ دکھائی نہ دے اور جزو میں کُل

کھیل لڑکوں کا ہوا، دیدۂ بینا نہ ہوا

تھی خبر گرم کہ غالبؔ کے اُڑیں گے پرزے

 دیکھنے ہم بھی گئے تھے، پہ تماشا نہ ہوا

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 *کام کا ہے مرے وہ فتنہ کہ برپا نہ ہوا (نسخۂ حسرت، نسخۂ مہر)

 

25۔

 

اسدؔ ہم وہ جنوں جولاں گدائے بے سر و پا ہیں

 کہ ہے سر پنجۂ مژگانِ آہو پشت خار اپنا

 

26۔

 

پۓ نذرِ کرم تحفہ ہے 'شرمِ نا رسائی' کا

بہ خوں غلطیدۂ صد رنگ، دعویٰ پارسائی کا

نہ ہو' حسنِ تماشا دوست' رسوا بے وفائی کا

بہ مہرِ صد نظر ثابت ہے دعویٰ پارسائی کا

 زکاتِ حسن دے، اے جلوۂ بینش، کہ مہر آسا

چراغِ خانۂ درویش ہو کاسہ گدائی کا

 نہ مارا جان کر بے جرم، غافل!* تیری گردن پر

رہا مانند خونِ بے گنہ حق آشنائی کا  

 تمنائے زباں محوِ سپاسِ بے زبانی ہے

مٹا جس سے تقاضا شکوۂ بے دست و پائی کا

 وہی اک بات ہے جو یاں نفَس واں نکہتِ گل ہے

چمن کا جلوہ باعث ہے مری رنگیں نوائی کا

 دہانِ ہر" بتِ پیغارہ جُو"، زنجیرِ رسوائی

عدم تک بے وفا چرچا ہے تیری بے وفائی کا

نہ دے نامے کو اتنا طول غالبؔ، مختصر لکھ دے

کہ حسرت سنج ہوں عرضِ ستم ہائے جدائی کا

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

*نسخۂ حمیدیہ، نظامی، حسرت اور مہر کے نسخوں میں لفظ قاتل ہے

 

27۔

 

گر نہ اندوہِ شبِ فرقت بیاں ہو جائے گا

بے تکلف، داغِ مہ  مُہرِ دہاں ہوجائے گا

زہرہ گر ایسا ہی شامِ ہجر میں ہوتا ہے آب

پر توِ مہتاب سیلِ خانماں ہوجائے گا

لے تو لوں سوتے میں اس  کے پاؤں کا بوسہ، مگر

ایسی باتوں سے وہ کافر بدگماں ہوجائے گا

دل کو ہم صرفِ وفا سمجھے تھے، کیا معلوم تھا

یعنی یہ پہلے ہی نذرِ امتحاں ہوجائے گا

سب کے دل میں ہے جگہ تیری، جو تو راضی ہوا

مجھ پہ گویا، اک زمانہ مہرباں ہوجائے گا

 گر نگاہِ گرم فرماتی رہی تعلیمِ ضبط

شعلہ  خس میں، جیسے خوں  رگ میں، نہاں ہوجائے گا

باغ میں مجھ کو نہ لے جا ورنہ میرے حال پر

ہر گلِ تر  ایک "چشمِ خوں فشاں" ہوجائے گا

واۓ گر میرا  ترا  انصاف محشر میں نہ ہو

اب تلک تو یہ توقع ہے کہ واں ہوجائے گا

فائدہ کیا؟ سوچ، آخر تو بھی دانا ہے اسدؔ

دوستی ناداں کی ہے، جی کا زیاں ہوجائے گا

 

28۔

 

درد مِنّت کشِ دوا نہ ہوا

میں نہ اچھا ہوا،  برا نہ ہوا

جمع کرتے ہو کیوں رقیبوں کو

اک تماشا ہوا، گلا نہ ہوا

ہم کہاں قسمت آزمانے جائیں

تو ہی جب خنجر آزما نہ ہوا

کتنے شیریں ہیں تیرے لب ،"کہ رقیب

گالیاں کھا کے بے مزا نہ ہوا"

ہے خبر گرم ان کے آنے کی

آج ہی گھر میں بوریا نہ ہوا

کیا وہ نمرود کی خدائی تھی؟

بندگی میں مرا بھلا نہ ہوا

جان دی، دی ہوئی اسی کی تھی

حق تو یوں* ہے کہ حق ادا نہ ہوا

زخم گر دب گیا، لہو نہ تھما

کام گر رک گیا،  روا نہ ہوا

رہزنی ہے کہ دل ستانی ہے؟

لے کے دل، "دلستاں" روانہ ہوا

کچھ تو پڑھئے کہ لوگ کہتے ہیں

آج غالبؔ  غزل سرا  نہ  ہوا!

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نسخۂ مہر،  نسخۂ علامہ آسی میں 'یوں' کے بجا ئے "یہ" آیا ہے

 

29۔

 

گلہ ہے شوق کو دل میں بھی تنگئ جا کا

 گہر میں محو ہوا  اضطراب دریا کا

 یہ جانتا ہوں کہ تو  اور  پاسخِ مکتوب!

مگر ستم زدہ ہوں ذوقِ خامہ فرسا کا

حنائے پائے خزاں ہے بہار اگر ہے یہی

دوامِ کلفتِ خاطر ہے عیش دنیا کا

غمِ فراق میں تکلیفِ سیرِ باغ نہ دو

مجھے دماغ نہیں خندہ* ہائے بے جا کا

ہنوز محرمئ حسن کو ترستا ہوں

کرے ہے ہر بُنِ مو کام چشمِ بینا کا

دل اس کو، پہلے ہی ناز و ادا سے، دے بیٹھے

ہمیں دماغ کہاں حسن کے تقاضا کا

نہ کہہ کہ گریہ بہ مقدارِ حسرتِ دل ہے

مری نگاہ میں ہے جمع و خرچ دریا کا

فلک کو دیکھ کے کرتا ہوں اُس کو یاد اسدؔ

جفا میں اس کی ہے انداز کارفرما کا

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

*نسخۂ نظامی کی املا ہے خند ہاۓ

 

30۔

 

قطرۂ مے بس کہ حیرت سے نفَس پرور ہوا

خطِّ جامِ مے سراسر  رشتۂ گوہر ہوا

اعتبارِ عشق کی خانہ خرابی دیکھنا

غیر نے کی آہ لیکن وہ خفا مجھ پر ہوا

 

31۔

 

جب بہ تقریبِ سفر یار نے محمل باندھا

تپشِ شوق نے ہر ذرّے پہ اک دل باندھا

اہل بینش نے بہ حیرت کدۂ شوخئ ناز

جوہرِ آئینہ کو طوطئ بسمل باندھا

یاس و امید نے اک عرَبدہ میداں مانگا

عجزِ ہمت نے طِلِسمِ دلِ سائل باندھا

نہ بندھے تِشنگئ ذوق  کے مضموں، غالبؔ

گرچہ دل کھول کے دریا کو بھی ساحل باندھا

 

32۔

 

میں اور بزمِ مے سے یوں تشنہ کام آؤں

گر میں نے کی تھی توبہ، ساقی کو کیا ہوا تھا؟

ہے ایک تیر جس میں دونوں چھِدے پڑے ہیں

وہ دن گئے کہ اپنا دل سے جگر جدا تھا

درماندگی میں غالبؔ کچھ بن پڑے تو جانوں

جب رشتہ بے گرہ تھا، ناخن گرہ کشا تھا

 

33۔

 

گھر ہمارا جو نہ روتے بھی تو ویراں ہوتا

بحر گر بحر نہ ہوتا تو بیاباں ہوتا

تنگئ دل کا گلہ کیا؟ یہ وہ کافر دل ہے

کہ اگر تنگ نہ ہوتا تو پریشاں ہوتا

بعد یک عمرِ وَرع بار تو دیتا بارے

کاش رِضواں ہی درِ  یار کا درباں ہوتا

 

34۔

 

نہ تھا کچھ تو خدا تھا، کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوتا

ڈُبویا مجھ کو ہونے نے، نہ ہوتا میں تو کیا ہوتا

ہُوا جب غم سے یوں بے حِس تو غم کیا سر کے کٹنے کا

نہ ہوتا گر جدا تن سے تو زانو پر دھرا ہوتا

ہوئی مدت کہ غالبؔ مرگیا، پر یاد آتا ہے

وہ ہر اک بات پر کہنا کہ یوں ہوتا تو کیا ہوتا

 

35۔

 

یک ذرۂ زمیں نہیں بے کار باغ کا

یاں جادہ بھی فتیلہ ہے لالے کے داغ کا

بے مے کِسے ہے طاقتِ آشوبِ آگہی

کھینچا ہے عجزِ حوصلہ نے خط ایاغ کا

بُلبل کے کاروبار پہ ہیں خندہ ہائے گل

کہتے ہیں جس کو عشق خلل ہے دماغ کا

تازہ نہیں ہے نشۂ فکرِ سخن مجھے

تِریاکئِ قدیم ہوں دُودِ چراغ کا

سو بار بندِ عشق سے آزاد ہم ہوئے

پر کیا کریں کہ دل ہی عدو ہے فراغ کا

بے خونِ دل ہے چشم میں موجِ نگہ غبار

یہ مے کدہ خراب ہے مے کے سراغ کا

باغِ شگفتہ تیرا بساطِ نشاطِ دل

ابرِ بہار خمکدہ کِس کے دماغ کا!

 

36۔

 

وہ میری چینِ جبیں سے غمِ پنہاں سمجھا

رازِ مکتوب بہ بے ربطئِ عنواں سمجھا

یک الِف بیش نہیں صقیلِ آئینہ ہنوز

چاک کرتا ہوں میں جب سے کہ گریباں سمجھا

شرحِ اسبابِ گرفتارئِ خاطر مت پوچھ

اس قدر تنگ ہوا دل کہ میں زنداں سمجھا

بدگمانی نے نہ چاہا اسے سرگرمِ خرام

رخ پہ ہر قطرہ عرق دیدۂ حیراں سمجھا

عجزسے اپنے یہ جانا کہ وہ بد خو ہوگا

نبضِ خس سے تپشِ شعلۂ سوزاں سمجھا

سفرِ عشق میں کی ضعف نے راحت طلبی

ہر قدم سائے کو میں اپنے شبستان سمجھا

تھا گریزاں مژۂ یار سے دل تا دمِ مرگ

دفعِ پیکانِ قضا اِس قدر آساں سمجھا

دل دیا جان کے کیوں اس کو وفادار، اسدؔ

غلطی کی کہ جو کافر کو مسلماں سمجھا

 

37۔

 

پھر مجھے دیدۂ تر یاد آیا

دل، جگر تشنۂ فریاد آیا

دم لیا تھا نہ قیامت نے ہنوز

پھر ترا وقتِ سفر یاد آیا

 سادگی ہائے تمنا، یعنی

پھر وہ نیرنگِ نظر یاد آیا

عذرِ  واماندگی، اے حسرتِ دل!

نالہ کرتا تھا، جگر یاد آیا

زندگی یوں بھی گزر ہی جاتی

 کیوں ترا راہ گزر  یاد آیا

 کیا ہی رضواں سے لڑائی ہوگی

  گھر ترا خلد میں گر یاد آیا

 آہ وہ جرأتِ فریاد کہاں

دل سے تنگ آکے جگر یاد آیا

پھر تیرے کوچے کو جاتا ہے خیال

دلِ گم گشتہ، مگر، یاد آیا

 کوئی ویرانی سی ویرانی ہے

دشت کو دیکھ کے گھر یاد آیا

میں نے مجنوں پہ لڑکپن میں اسدؔ

سنگ اٹھایا تھا کہ سر یاد آیا

 

38۔

 

ہوئی تاخیر تو کچھ باعثِ تاخیر بھی تھا

آپ آتے تھے، مگر کوئی عناں گیر بھی تھا

 تم سے بے جا ہے مجھے اپنی تباہی کا گلہ

اس میں کچھ شائبۂ خوبیِ تقدیر بھی تھا

 تو مجھے بھول گیا ہو تو پتا بتلا دوں؟

کبھی فتراک میں تیرے کوئی نخچیر بھی تھا

 قید میں ہے ترے وحشی کو وہی زلف کی یاد

ہاں! کچھ اک رنجِ گرانباریِ زنجیر بھی تھا

بجلی اک کوند گئی آنکھوں کے آگے تو کیا!

بات کرتے، کہ میں لب تشنۂ تقریر بھی تھا

 یوسف اس کو کہوں اور کچھ نہ کہے، خیر ہوئی

 گر بگڑ بیٹھے تو میں لائقِ تعزیر بھی تھا

 دیکھ کر غیر کو ہو کیوں نہ کلیجا ٹھنڈا

نالہ کرتا تھا، ولے طالبِ تاثیر بھی تھا

 پیشے میں عیب نہیں، رکھیے نہ فرہاد کو نام

ہم ہی آشفتہ سروں میں وہ جواں میر بھی تھا

 ہم تھے مرنے کو کھڑے، پاس نہ آیا، نہ سہی

 آخر اُس شوخ کے ترکش میں کوئی تیر  بھی تھا

 پکڑے جاتے ہیں فرشتوں کے لکھے پر ناحق

 آدمی کوئی ہمارا َدمِ تحریر بھی تھا؟

ریختے کے تمہیں استاد نہیں ہو غالبؔ

 کہتے ہیں اگلے زمانے میں کوئی میر بھی تھا

 

39۔

 

لب خشک در تشنگی، مردگاں کا

زیارت کدہ ہوں دل آزردگاں کا

ہمہ نا امیدی، ہمہ بد گمانی

 میں دل ہوں فریبِ وفا خوردگاں کا

 

40۔

 

تو دوست کسی کا بھی، ستمگر! نہ ہوا تھا

اوروں پہ ہے وہ ظلم کہ مجھ پر نہ ہوا تھا

چھوڑا مہِ نخشب کی طرح دستِ قضا نے

خورشید ہنوز اس کے برابر نہ ہوا تھا

توفیق بہ اندازۂ ہمت ہے ازل سے

آنکھوں میں ہے وہ قطرہ کہ گوہر نہ ہوا تھا

جب تک کہ نہ دیکھا تھا قدِ یار کا عالم

میں معتقدِ فتنۂ محشر نہ ہوا تھا

میں سادہ دل، آزردگیِ یار سے خوش ہوں

یعنی سبقِ شوقِ مکرّر نہ ہوا تھا

دریائے معاصی ُتنک آبی سے ہوا خشک

میرا سرِ دامن بھی ابھی تر نہ ہوا تھا

جاری تھی اسدؔ! داغِ جگر سے مری تحصیل

آ تشکدہ جاگیرِ سَمَندر نہ ہوا تھا

 

41۔

 

شب کہ وہ مجلس فروزِ خلوتِ ناموس تھا

رشتۂٴ ہر شمع خارِ کِسوتِ فانوس تھا

مشہدِ عاشق سے کوسوں تک جو اُگتی ہے حنا

کس قدر یا رب! ہلاکِ حسرتِ پابوس تھا

حاصلِ الفت نہ دیکھا جز شکستِ آرزو

دل بہ دل پیوستہ، گویا، یک لبِ افسوس تھا

کیا کروں بیمارئِ غم کی فراغت کا بیاں

جو کہ کھایا خونِ دل، بے منتِ کیموس تھا

 

42۔

 

آئینہ دیکھ، اپنا سا  منہ لے کے رہ گئے

صاحب کو دل نہ دینے پہ کتنا غرور تھا

قاصد کو اپنے ہاتھ سے گردن نہ ماریے

اس کی خطا نہیں ہے یہ میرا قصور تھا

 

43۔

 

ضعفِ جنوں کو وقتِ تپش در بھی دور تھا

اک گھر میں مختصر سا بیاباں ضرور تھا

 

44۔

 

فنا کو عشق ہے بے مقصداں حیرت پرستاراں

نہیں رفتارِ عمرِ تیز رو  پابندِ مطلب ہا

 

45۔

 

عرضِ نیازِ عشق کے قابل نہیں رہا
جس دل پہ ناز تھا مجھے وہ دل نہیں رہا
جاتا ہوں داغِ حسرتِ ہستی لیے ہوئے
ہوں شمعِ کشتہ درخورِ محفل نہیں رہا
مرنے کی اے دل اور ہی تدبیر کر کہ میں
شایانِ دست و خنجرِ قاتل نہیں رہا
بر روۓ شش جہت درِ آئینہ باز ہے
یاں امتیازِ ناقص و کامل نہیں رہا
وا کر دیے ہیں شوق نے بندِ نقابِ حسن
غیر از نگاہ اب کوئی حائل نہیں رہا
گو میں رہا رہینِ ستم ہاے روزگار
لیکن ترے خیال سے غافل نہیں رہا
دل سے ہوائے کشتِ وفا مٹ گئی کہ واں
حاصل سواے حسرتِ حاصل نہیں رہا
بیدادِ عشق سے نہیں ڈرتا مگر اسد
ؔ
جس دل پہ ناز تھا مجھے وہ دل نہیں رہا

 

46۔

 

رشک کہتا ہے کہ اس کا غیر سے اخلاص حیف!
عقل کہتی ہے کہ وہ بے مہر کس کا آشنا
ذرّہ ذرّہ ساغرِ مے خانۂ نیرنگ ہے
گردشِ مجنوں بہ چشمک‌ہاے لیلیٰ آشنا
شوق ہے "ساماں طرازِ نازشِ اربابِ عجز"
ذرّہ صحرا دست گاہ و قطرہ دریا آشنا
میں اور ایک آفت کا ٹکڑا وہ دلِ وحشی، "
کہ ہے
عافیت کا دشمن اور آوارگی کا آشنا"

شکوہ سنجِ رشکِ ہم دیگر نہ رہنا چاہیے
میرا زانو مونس اور آئینہ تیرا آشنا
کوہکن" نقّاشِ یک تمثالِ شیریں" تھا اسد
ؔ
سنگ سے سر مار کر ہووے نہ پیدا آشنا

 

47۔

 

ذکر اس پری وش کا، اور پھر بیاں اپنا

بن گیا رقیب آخر۔ تھا جو رازداں اپنا

مے وہ کیوں  بہت پیتے بز مِ غیر میں یا رب

آج ہی ہوا منظور اُن کو امتحاں اپنا

منظر اک بلندی پر اور ہم بنا سکتے

عرش سے اُدھر ہوتا، کاشکے مکاں اپنا

دے وہ جس قد ر ذلت ہم ہنسی  میں ٹالیں گے

بارے آشنا نکلا، ان کا پاسباں، اپنا

در دِ دل لکھوں  کب تک، جاؤں ان کو دکھلادوں

انگلیاں فگار اپنی، خامہ خونچکاں اپنا

گھستے گھستے مٹ جاتا، آپ نے عبث بدلا

ننگِ سجدہ سے میرے، سنگِ آستاں اپنا

تا کرے نہ غمازی، کرلیا ہے دشمن کو

دوست کی شکایت میں ہم نے ہمزباں اپنا

ہم کہاں کے دانا تھے، کس ہنر میں یکتا تھے

بے سبب ہوا غالبؔ دشمن آسماں اپنا

 

48۔

 

سرمۂ مفتِ نظر ہوں مری  قیمت* یہ ہے

کہ رہے چشمِ خریدار پہ احساں میرا

رخصتِ نالہ مجھے دے کہ مبادا ظالم

تیرے چہرے سے  ہو ظاہر غمِ پنہاں میرا

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* نسخۂ آگرہ، منشی شیو نارائن، 1863ء میںمری قسمت

 

49۔

 

غافل بہ وہمِ ناز خود آرا ہے ورنہ یاں

بے شانۂ صبا نہیں طُرّہ گیاہ کا

بزمِ قدح سے عیشِ تمنا نہ رکھ، کہ رنگ

صید  ز  دام جستہ ہے اس دام گاہ کا

رحمت اگر قبول کرے، کیا بعید ہے

شرمندگی سے عذر نہ کرنا گناہ کا

مقتل  کو کس  نشاط سے جا تا  ہو ں میں، کہ ہے

پُرگل خیالِ زخم سے دامن نگاہ کا

جاں در" ہواۓ یک نگہِ گرم" ہے اسدؔ

پروانہ ہے وکیل ترے داد خواہ کا

 

50۔

 

جور سے باز آئے پر باز آئیں کیا
کہتے ہیں ہم تجھ کو منہ دکھلائیں کیا
رات دن گردش میں ہیں سات آسماں
ہو رہے گا کچھ نہ کچھ گھبرائیں کیا
لاگ ہو تو اس کو ہم سمجھیں لگاؤ
جب نہ ہو کچھ بھی تو دھوکا کھائیں کیا
ہو لیے کیوں نامہ بر کے ساتھ ساتھ
یا رب اپنے خط کو ہم پہنچائیں کیا
موجِ خوں سر سے گزر  ہی کیوں نہ جائے
آستانِ یار سے اٹھ جائیں کیا
عمر بھر دیکھا کیے مرنے کی راہ
مر گیے پر دیکھیے دکھلائیں کیا
پوچھتے ہیں وہ کہ غالب
ؔ کون ہے
کوئی بتلاؤ کہ ہم بتلائیں کیا

 

51۔

 

لطافت بےکثافت جلوہ پیدا کر نہیں سکتی

چمن زنگار ہے آئینۂ بادِ بہاری کا

حریفِ جوششِ دریا نہیں خوددارئ ساحل

جہاں ساقی ہو تو باطل ہے دعویٰ ہوشیاری کا

 

52۔

عشرتِ قطرہ ہے دریا میں فنا ہو جانا

درد کا حد سے گزرنا ہے دوا ہو جانا

تجھ سے، قسمت میں مری، صورتِ قفلِ ابجد

تھا لکھا بات کے بنتے ہی جدا ہو جانا

دل ہوا کشمکشِ چارۂ زحمت میں تمام

مِٹ گیا گھِسنے میں اُس عُقدے کا وا ہو جانا

 اب جفا سے بھی ہیں محروم ہم  اللہ اللہ

اس قدر  دشمنِ اربابِ وفا ہو جانا

ضعف سے گریہ مبدّل بہ دمِ سرد ہوا

باور آیا ہمیں پانی کا ہوا ہو جانا

دِل سے مِٹنا تری انگشتِ حنائی کا خیال

ہو گیا گوشت سے ناخن کا جُدا ہو جانا

ہے مجھے ابرِ بہاری کا برس کر کھُلنا

روتے روتے غمِ فُرقت میں فنا ہو جانا

گر نہیں نکہتِ گل کو ترے کوچے کی ہوس

کیوں ہے گردِ رہِ جَولانِ صبا ہو جانا

تاکہ تجھ پر کھُلے اعجازِ ہواۓ صَیقل

دیکھ برسات میں سبز آئنے کا ہو جانا

بخشے ہے جلوۂ گُل، ذوقِ تماشا غالبؔ

چشم کو چاہۓ ہر رنگ میں وا ہو جانا

 

53۔

 

شکوۂ یاراں غبارِ دل میں پنہاں کر دیا

غالبؔ ایسے گنج کو عیاں یہی ویرانہ تھا

 

54۔

 

پھر وہ سوۓ چمن آتا ہے خدا خیر کرے

رنگ اڑتا ہے گُلِستاں کے ہواداروں کا

 

55۔

 

اسدؔ!  یہ عجز  و  بے سامانئِ فرعون توَام ہے

جسے تو بندگی کہتا ہے دعویٰ ہے خدائی کا

 

56۔

 

؁ 1857ء

 

بس کہ فعّالِ ما یرید ہے آج

ہر سلحشور انگلستاں کا

گھر سے بازار میں نکلتے ہوۓ

زہرہ  ہوتا  ہے آب انساں کا

چوک جس کو کہیں وہ مقتل ہے

گھر بنا ہے نمونہ  زنداں کا

شہرِ دہلی کا ذرّہ ذرّہ خاک

تشنۂ خوں ہے ہر مسلماں کا

کوئی واں سے نہ آ سکے یاں تک

آدمی واں نہ جا سکے یاں کا

میں نے مانا کہ مل گۓ پھر کیا

وہی  رونا  تن و  دل  و  جاں کا

گاہ جل کر کیا کیۓ شکوہ

سوزشِ داغ ہاۓ پنہاں کا

گاہ رو کر کہا کیۓ باہم

ماجرا دیدہ ہاۓ گریاں کا

اس طرح کے وصال سے یا رب

کیا مٹے داغ دل سے ہجراں کا

 

57۔

 

بہ رہنِ شرم ہے با وصفِ شوخی اہتمام اس کا

نگیں میں جوں شرارِ سنگ نا پیدا ہے نام اس کا

مِسی آلود ہے مُہرنوازش نامہ ظاہر ہے

کہ داغِ آرزوۓ بوسہ دیتا ہے پیام اس کا

بامیّدِ نگاہِ خاص ہوں محمل کشِ حسرت

مبادا ہو عناں گیرِ تغافل لطفِ عام اس کا

 

58۔

 

عیب کا دریافت کرنا، ہے ہنرمندی اسدؔ

نقص پر اپنے ہوا جو مطلعِ، کامل ہوا

 

59۔

 

شب کہ ذوقِ گفتگو سے تیرے، دل بے تاب تھا

شوخئِ وحشت سے افسانہ فسونِ خواب تھا

واں ہجومِ نغمہ ہاۓ سازِ عشرت تھا اسدؔ

ناخنِ غم  یاں سرِ تارِ نفس مضراب تھا

 

60۔

 

دود کو آج اس کے ماتم میں سیہ پوشی ہوئی

وہ دلِ سوزاں کہ کل تک شمع، ماتم خانہ تھا

شکوۂ  یاراں غبارِ دل میں پنہاں کر دیا

غالبؔ ایسے کنج کو شایاں یہی ویرانہ تھا

 

ب

 

61۔

 

پھر ہوا وقت کہ ہو بال کُشا موجِ شراب

دے بطِ مے کو دل و دستِ شنا موجِ شراب

پوچھ مت وجہ سیہ مستئِ اربابِ چمن

سایۂ تاک میں ہوتی ہے ہَوا موجِ شراب

جو ہوا غرقۂ مے بختِ رسا رکھتا ہے

سر پہ گزرے پہ بھی ہے بالِ ہما  موجِ شراب

ہے یہ برسات وہ موسم کہ عجب کیا ہے اگر

موجِ ہستی کو کرے فیضِ ہوا موجِ شراب

چار موج اٹھتی ہے طوفانِ طرب سے ہر سو

موجِ گل، موجِ شفق، موجِ صبا، موجِ شراب

جس قدر روح نباتی ہے جگر تشنۂ ناز

دے ہے تسکیں بَدَمِ آبِ بقا موجِ شراب

بس کہ دوڑے ہے رگِ تاک میں خوں ہوہوکر

شہپرِ رنگ سے ہے بال کشا موجِ شراب

موجۂ گل سے چراغاں ہے گزرگاہِ خیال

ہے تصوّر میں ز بس جلوہ نما موجِ شراب

نشّے کے پردے میں ہے محوِ تماشاۓ دماغ

بس کہ رکھتی ہے سرِ نشو و نما موجِ شراب

ایک عالم پہ ہیں طوفانئِ کیفیّتِ فصل

موجۂ سبزۂ نوخیز سے تا موجِ شراب

شرحِ ہنگامۂ مستی ہے، زہے! موسمِ گل

رہبرِ قطرہ بہ دریا ہے، خوشا موجِ شراب

ہوش اڑتے ہیں مرے، جلوۂ گل دیکھ، اسدؔ

پھر ہوا وقت، کہ ہو بال کُشا موجِ شراب

 

ت

 

62۔

 

افسوس کہ دنداں* کا کیا رزق فلک نے

جن لوگوں کی تھی درخورِ عقدِ گہر انگشت

کافی ہے نشانی تری چھلّے کا نہ دینا

خالی مجھے دکھلا کے بوقتِ سفر انگشت

لکھتا ہوں اسدؔ سوزشِ دل سے سخنِ گرم

تا رکھ نہ سکے کوئی مرے حرف پر انگشت

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

*نسخۂ نظامی میں اگرچہ دیداں ہے لیکن معانی کے لحاظ سے دنداں مناسب ہے، دیداں سہوِ کتابت ممکن ہے۔

 دیداں دودہ کا جمع ہے اس سے مراد کیڑے ہیں۔ تب اس کا مطلب بنتا ہے کہ انگلیوں کو قبر کی کیڑوں کا خوراک بنا دیا۔ نسخۂ مہر  اور نسخہ علامہ آسی میں لفظ دیداں ہی آیا ہے ہاں البتہ نسخہ حمیدیہ (شایع کردہ مجلسِ ترقی ادب  لاہور 1983 ) میں لفظ دندان آیا ہے

 

63۔

 

رہا گر کوئی تا قیامت سلامت

پھر اک روز مرنا ہے حضرت سلامت

جگر کو مرے عشقِ خوں نابہ مشرب

لکھے ہے خداوندِ نعمت سلامت

علی اللّرغمِ دشمن، شہیدِ وفا ہوں

مبارک مبارک سلامت سلامت

نہیں گر سر و برگِ ادراک معنی

تماشاۓ نیرنگ صورت سلامت

 

64۔

 

آمدِ خط سے ہوا ہے سرد جو بازارِ دوست

دودِ شمعِ کشتہ تھا شاید خطِ رخسارِ دوست

اے دلِ ناعاقبت اندیش! ضبطِ شوق کر

کون لا سکتا ہے تابِ جلوۂ دیدارِ دوست

خانہ ویراں سازئ حیرت! تماشا کیجیۓ

صورتِ نقشِ قدم ہوں رفتۂ رفتارِ دوست

عشق میں بیدادِ رشکِ غیر نے مارا مجھے

کُشتۂ دشمن ہوں آخر، گرچہ تھا بیمارِ دوست

چشمِ ما روشن، کہ اس بے درد کا دل شاد ہے

دیدۂ پر خوں ہمارا ساغرِ سرشارِ دوست

 

ق

 

غیر یوں کرتا ہے میری پرسش اس کے ہجر میں

بے تکلّف دوست ہو جیسے کوئی غم خوارِ دوست

تاکہ میں جانوں کہ ہے اس کی رسائی واں تلک

مجھ کو دیتا ہے پیامِ وعدۂ دیدارِ دوست

جب کہ میں کرتا ہوں اپنا شکوۂ ضعفِ دماغ

سَر کرے ہے وہ حدیثِ زلفِ عنبر بارِ دوست

چپکے چپکے مجھ کو روتے دیکھ پاتا ہے اگر

ہنس کے کرتا ہے بیانِ شوخئ گفتارِ دوست

مہربانی ہاۓ دشمن کی شکایت کیجیۓ

یا بیاں کیجے سپاسِ لذّتِ آزارِ دوست

یہ غزل اپنی، مجھے جی سے پسند آتی ہےآپ

ہے ردیف شعر میں غالبؔ!  ز بس تکرارِ دوست

 

65۔

 

مند گئیں  کھولتے ہی کھولتے آنکھیں غالبؔ

یار لاۓ مری بالیں پہ اسے، پر کس وقت

 

ج

 

66۔

 

گلشن میں بند وبست بہ رنگِ دگر ہے آج

قمری کا طوق حلقۂ بیرونِ در ہے آج

آتا ہے ایک پارۂ دل ہر فغاں کے ساتھ

تارِ نفس کمندِ شکارِ  اثر ہے آج

اے عافیت! کنارہ کر، اے انتظام! چل

سیلابِ گریہ در پےِ دیوار  و  در  ہے آج

 

67۔

 

معزولئ تپش ہوئی افرازِ انتظار

چشمِ کشودہ حلقۂ بیرونِ در ہے آج

 

68۔

 

لو ہم مریضِ عشق کے بیماردار ہیں

اچھاّ اگر نہ ہو تو مسیحا کا کیا علاج!!

 

چ

 

69۔

 

نفَس نہ انجمنِ آرزو سے باہر کھینچ

اگر شراب نہیں انتظارِ ساغر کھینچ

"کمالِ گرمئ سعئ تلاشِ دید" نہ پوچھ

بہ رنگِ خار مرے آئینہ سے جوہر کھینچ

تجھے بہانۂ راحت ہے انتظار اے دل!

کیا ہے کس نے اشارہ کہ نازِ بسترکھینچ

تری طرف ہے بہ حسرت نظارۂ نرگس

بہ کورئ دل و چشمِ رقیب ساغر کھینچ

بہ نیم غمزہ ادا کر حقِ ودیعتِ ناز

نیامِ پردۂ زخمِ جگر سے خنجر کھینچ

مرے قدح میں ہے صہباۓ آتشِ پنہاں

بروۓ سفرہ کبابِ دلِ سمندر کھینچ

 

د

 

70۔

 

حسن غمزے کی کشاکش سے چھٹا میرے بعد

بارے آرام سے ہیں اہلِ جفا میرے بعد

منصبِ شیفتگی کے کوئی قابل نہ رہا

ہوئی معزولئ انداز  و  ادا میرے بعد

شمع بجھتی ہے تو اس میں سے دھواں اٹھتا ہے

شعلۂ عشق سیہ پوش ہوا میرے بعد

خوں ہے دل خاک میں احوالِ بتاں پر، یعنی

ان کے ناخن ہوۓ محتاجِ حنا میرے بعد

درخورِ عرض نہیں جوہرِ بیداد کو جا

نگہِ ناز ہے سرمے سے خفا میرے بعد

ہے جنوں اہلِ جنوں کے لۓ آغوشِ وداع

چاک ہوتا ہے گریباں سے جدا میرے بعد

کون ہوتا ہے حریفِ مۓ مرد افگنِ عشق

ہے مکّرر لبِ ساقی میں صلا* میرے بعد

غم سے مرتا ہوں کہ اتنا نہیں دنیا میں کوئی

کہ کرے تعزیتِ مہر و وفا میرے بعد

آۓ ہے بے کسئ عشق پہ رونا غالبؔ

کس کے گھر جاۓ گا سیلابِ بلا میرے بعد

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

*نسخۂ حمیدیہ میں ہے لبِ ساقی پہ۔ اکثر نسخوں میں بعد میں یہی املا ہے۔

* نسخۂ مہر، آسی اور باقی نسخوں میں لفظ 'پہ' ہے۔

 

71۔

 

ہلاکِ بے خبری نغمۂ وجود و عدم

جہان و اہلِ جہاں سے جہاں جہاں آباد

 

72۔

 

تجھ سے مقابلے کی کسے تاب ہے ولے

میرا لہو بھی خوب ہے تیری حنا کے بعد

 

ر

 

73۔

 

بلا سے ہیں جو یہ پیشِ نظر در و دیوار

نگاہِ شوق کو ہیں بال و  پر در و دیوار

وفورِ عشق نے کاشانہ کا کیا یہ رنگ

کہ ہو گۓ مرے دیوار  و در در و دیوار

نہیں ہے سایہ، کہ سن کر نوید مَقدمِ یار

گۓ ہیں چند قدم پیشتر در و دیوار

ہوئی ہے کس قدر  ارزانئ مۓ جلوہ

کہ مست ہے ترے کوچے میں ہر در و دیوار

جو ہے تجھے سرِ سوداۓ انتظار، تو آ

کہ ہیں دکانِ متاعِ نظر در و دیوار

ہجومِ گریہ کا سامان کب کیا میں نے

کہ گر پڑے نہ مرے پاؤں پر در و دیوار

وہ آ رہا مرے ہم سایہ میں، تو ساۓ سے

ہوۓ فدا در  و دیوار  پر  در و دیوار

نظر میں کھٹکے ہے بِن تیرے گھر کی آبادی

ہمیشہ روتے ہیں ہم دیکھ کر در و دیوار

نہ پوچھ بے خودئِ عیشِ مَقدمِ سیلاب

کہ ناچتے ہیں پڑے سر بسر در و دیوار

نہ کہہ کسی سے کہ غالبؔ نہیں زمانے میں

حریف رازِ محبت مگر در و دیوار

 

74۔

 

گھر جب بنا لیا ترے در پر کہے بغیر

جانے گا اب بھی تو نہ مرا گھر کہے بغیر؟

کہتے ہیں جب رہی نہ مجھے طاقتِ سخن

جانوں کسی کے دل کی میں کیونکر  کہے بغیر

کام اس سے آ پڑا ہے کہ جس کا جہان میں

لیوے نہ کوئی نام ستم گر  کہے بغیر

جی میں ہی کچھ نہیں ہے ہمارے وگرنہ ہم

سر جاۓ یا رہے، نہ رہیں پر  کہے بغیر

چھوڑوں گا میں نہ اس بتِ کافر کا پوجنا

چھوڑے نہ خلق گو مجھے کافَر کہے بغیر

مقصد ہے ناز و غمزہ  ولے گفتگو میں کام

چلتا نہیں ہے دُشنہ و خنجر  کہے بغیر

ہر چند ہو مشاہدۂ حق کی گفتگو

بنتی نہیں ہے بادہ و ساغر  کہے بغیر

بہرا ہوں میں۔ تو چاہیۓ، دونا ہوں التفات

سنتا نہیں ہوں بات مکرّر  کہے بغیر

غالبؔ نہ کر حضور میں تو بار بار عرض

ظاہر ہے تیرا حال سب اُن پر  کہے بغیر

 

75۔

 

کیوں جل گیا نہ، تابِ رخِ یار دیکھ کر

جلتا ہوں اپنی طاقتِ دیدار دیکھ کر

آتش پرست کہتے ہیں اہلَ جہاں مجھے

سرگرمِ نالہ ہاۓ شرربار دیکھ کر

کیا آبروۓ عشق، جہاں عام ہو جفا

رکتا ہوں تم کو بے سبب آزار دیکھ کر

آتا ہے میرے قتل کو پَر جوشِ رشک سے

مرتا ہوں اس کے ہاتھ میں تلوار دیکھ کر

ثابت ہوا ہے گردنِ مینا پہ خونِ خلق

لرزے ہے موجِ مے تری رفتار دیکھ کر

وا حسرتا کہ یار نے کھینچا ستم سے ہاتھ

ہم کو حریصِ لذّتِ آزار دیکھ کر

بِک جاتے ہیں ہم آپ، متاعِ سخن کے ساتھ

لیکن عیارِ طبعِ خریدار دیکھ کر

زُنّار باندھ، سبحۂ صد دانہ توڑ ڈال

رہرو چلے ہے راہ کو ہموار دیکھ کر

ان آبلوں سے پاؤں کے گھبرا گیا تھا میں

جی خوش ہوا ہے راہ کو پُر خار دیکھ کر

کیا بد گماں ہے مجھ سے، کہ آئینے میں مرے

طوطی کا عکس سمجھے ہے زنگار دیکھ کر

گرنی تھی ہم پہ برقِ تجلّی، نہ طو ر پر

دیتے ہیں بادہ' ظرفِ قدح خوار' دیکھ کر

سر پھوڑنا وہ! 'غالبؔ شوریدہ حال' کا

یاد آگیا مجھے تری دیوار دیکھ کر

 

76۔

 

لرزتا ہے مرا دل زحمتِ مہرِ درخشاں پر

میں ہوں وہ قطرۂ شبنم کہ ہو خارِ بیاباں پر

نہ چھوڑی حضرتِ یوسف نے یاں بھی خانہ آرائی

سفیدی دیدۂ یعقوب کی پھرتی ہے زنداں پر

فنا "تعلیمِ درسِ بے خودی" ہوں اُس زمانے سے

کہ مجنوں لام الف لکھتا تھا دیوارِ دبستاں پر

فراغت کس قدر رہتی مجھے تشویش مرہم سے

بہم گر صلح کرتے پارہ ہاۓ دل نمک داں پر

نہیں اقلیم الفت میں کوئی طومارِ ناز ایسا

کہ پشتِ چشم سے جس کی نہ ہووے مُہر عنواں پر

مجھے اب دیکھ کر ابرِ شفق آلودہ یاد آیا

کہ فرقت میں تری آتش برستی تھی گلِستاں پر

بجُز پروازِ شوقِ ناز کیا باقی رہا ہوگا

قیامت اِک ہواۓ تند ہے خاکِ شہیداں پر

نہ لڑ ناصح سے، غالبؔ، کیا ہوا گر اس نے شدّت کی

ہمارا بھی تو آخر زور چلتا ہے گریباں پر

 

 

77۔

 

ہے بس کہ ہر اک ان کے اشارے میں نشاں اور

کرتے ہیں مَحبّت تو گزرتا ہے گماں اور

یارب وہ نہ سمجھے ہیں نہ سمجھیں گے مری بات

دے اور دل ان کو،  جو نہ دے مجھ کو زباں اور

ابرو سے ہے کیا اس نگہِ ناز کو پیوند

ہے تیر مقرّر مگر اس کی ہے کماں اور

تم شہر میں ہو تو ہمیں کیا غم، جب اٹھیں گے

لے آئیں گے بازار سے جا کر دل و جاں اور

ہر چند سُبُک دست ہوۓ بت شکنی میں

ہم ہیں، تو ابھی راہ میں ہیں سنگِ گراں اور

ہے خوںِ جگر جوش میں دل کھول کے روتا

ہوتے جو کئی دیدۂ خو نبانہ فشاں اور

مرتا ہوں اس آواز پہ ہر چند سر اڑ جاۓ

جلاّد کو لیکن وہ کہے جائیں کہ ہاں اور

لوگوں کو ہے خورشیدِ جہاں تاب کا دھوکا

ہر روز دکھاتا ہوں میں اک داغِ نہاں اور

لیتا۔ نہ اگر دل تمھیں دیتا، کوئی دم چین

کرتا۔جو نہ مرتا، کوئی دن آہ و فغاں اور

پاتے نہیں جب راہ تو چڑھ جاتے ہیں نالے

رُکتی ہے مری طبع۔ تو ہوتی ہے رواں اور

ہیں اور بھی دنیا میں سخنور بہت اچھّے

کہتے ہیں کہ غالبؔ کا ہے اندازِ بیاں اور

 

78۔

 

صفاۓ حیرت آئینہ ہے سامانِ زنگ آخر

تغیر " آبِ برجا ماندہ" کا پاتا ہے رنگ آخر

نہ کی سامانِ عیش و جاہ نے تدبیر  وحشت کی

ہوا جامِ زُمرّد بھی مجھے داغ پِلنگ آخر

 

79۔

 

جنوں کی دست گیری کس سے ہو گر ہو نہ عریانی

گریباں چاک کا حق ہو گیا ہے میری گردن پر

بہ رنگِ کاغذِ آتش زدہ نیرنگِ بے تابی

ہزار آئینہ دل باندھے ہے بالِ یک تپیدن پر

فلک سے ہم کو عیشِ رفتہ کا کیا کیا تقاضا ہے

متاعِ بُردہ کو سمجھے ہوۓ ہیں قرض رہزن پر

ہم اور وہ بے سبب "رنج آشنا دشمن" کہ رکھتا ہے

شعاعِ مہر سے تُہمت نگہ کی چشمِ روزن پر

فنا کو سونپ گر مشتاق ہے اپنی حقیقت کا

فروغِ طالعِ خاشاک ہے موقوف گلخن پر

اسدؔ بسمل ہے کس انداز کا، قاتل سے کہتا ہے

تو مشقِ ناز کر، خونِ دو عالم میری گردن پر

 

80۔

 

ستم کش مصلحت سے ہوں کہ خوباں تجھ پہ عاشق ہیں

تکلـّف بـر طـرف! مـل جائـے گا تـجـھ سـا رقیـب آخــر

 

81۔

 

لازم تھا کہ دیکھو مرا رستہ کوئی دِن اور

تنہا گئے کیوں؟ اب رہو تنہا کوئی دن اور

مٹ جائےگا سَر ،گر، ترا پتھر نہ گھِسے گا

ہوں در پہ ترے ناصیہ فرسا کوئی دن اور

آئے ہو کل اور آج ہی کہتے ہو کہ جاؤں؟

مانا کہ ھمیشہ نہیں اچھا کوئی دن اور

جاتے ہوئے کہتے ہو قیامت کو ملیں گے

کیا خوب! قیامت کا ہے گویا کوئی دن اور

ہاں اے فلکِ پیر! جواں تھا ابھی عارف

کیا تیرا بگڑ تا جو نہ مرتا کوئی دن اور

تم ماہِ شبِ چار دہم تھے مرے گھر کے

پھر کیوں نہ رہا گھر کا وہ نقشا کوئی دن اور

تم کون سے ایسے تھے کھرے داد و ستد کے

کرتا ملکُ الموت تقاضا کوئی دن اور

مجھ سے تمہیں نفرت سہی، نیر سے لڑائی

بچوں کا بھی دیکھا نہ تماشا کوئی دن اور

گزری نہ بہرحال یہ مدت خوش و ناخوش

کرنا تھا جواں مرگ گزارا کوئی دن اور

ناداں ہو جو کہتے ہو کہ کیوں جیتے ہیں غالبؔ

قسمت میں ہے مرنے کی تمنا کوئی دن اور

 

 

ز

 

82۔

 

حریفِ مطلبِ مشکل نہیں فسونِ نیاز

دعا قبول ہو یا رب کہ عمرِ خضر دراز

نہ ہو بہ ہرزہ، بیاباں نوردِ  وہمِ  وجود

ہنوز تیرے تصوّر میں ہےنشیب و فراز

وصالِ جلوہ تماشا ہے پر دماغ کہاں!

کہ دیجئے آئینۂ انتظار کو  پرواز

ہر ایک ذرّۂ عاشق ہے آفتاب پرست

گئی نہ خاک ہوۓ پر ہواۓ جلوۂ ناز

نہ پوچھ وسعتِ مے خانۂ جنوں غالبؔ

جہاں یہ کاسۂ گردوں ہے ایک خاک انداز

 

83۔

 

فارغ مجھے نہ جان کہ مانندِ صبح و مہر

ہے داغِ عشق، زینتِ جیبِ کفن ہنوز

ہے نازِ مفلساں "زرِ ا ز دست رفتہ" پر

ہوں "گل فروِشِ شوخئ داغِ کہن" ہنوز

مے خانۂ جگر میں یہاں خاک بھی نہیں

خمیازہ کھینچے ہے بتِ بیدادِ  فن ہنوز

 

84۔

 

کیوں کر اس بت سے رکھوں جان عزیز!

کیا نہیں ہے مجھے ایمان عزیز!

دل سے نکلا۔ پہ نہ نکلا دل سے

ہے ترے تیر کا پیکان عزیز

تاب لاتے ہی بنے گی غالبؔ

واقعی سخت ہے اور جان عزیز

 

85۔

 

وسعتِ سعیِ کرم دیکھ کہ سر تا سرِ خاک

گزرے ہے آبلہ پا ابرِ گہربار ہنوز

یک قلم کاغذِ آتش زدہ ہے صفحۂ دشت

نقشِ پا میں ہے تپِ گرمئ رفتار ہنوز

 

86۔

 

گل کھلے غنچے چٹکنے لگے اور صبح ہوئی

سرخوشِ خواب ہے وہ نرگسِ مخمور ہنوز

 

87۔

 

نہ گل نغمہ ہوں نہ پردۂ ساز

میں ہوں اپنی شکست کی آواز

تو اور آرائشِ خمِ کاکل

میں اور اندیشہ ہاۓ دور دراز

لاف تمکیں، فریبِ سادہ دلی

ہم ہیں، اور راز ہاۓ سینہ گداز

ہوں گرفتارِ الفتِ صیّاد

ورنہ باقی ہے طاقتِ پرواز

وہ بھی دن ہو، کہ اس ستم گر سے

ناز کھینچوں، بجاۓ حسرتِ ناز

نہیں دل میں مرے وہ قطرۂ خون

جس سے مذگاں ہوئی نہ ہو گلباز

اے ترا غمزہ یک قلم انگیز

اے ترا ظلم سر بسر انداز

تو ہوا جلوہ گر، مبارک ہو!

ریزشِ سجدۂ جبینِ نیاز

مجھ کو پوچھا تو کچھ غضب نہ ہوا

میں غریب اور تو غریب نواز

اسدؔ اللہ خاں تمام ہوا

اے دریغا وہ رندِ شاہد باز

 

س

 

88۔

 

مُژدہ ، اے ذَوقِ اسیری ! کہ نظر آتا ہے

دامِ خالی ، قفَسِ مُرغِ گِرفتار کے پاس

جگرِ تشنۂ آزار ، تسلی نہ ہوا

جُوئے خُوں ہم نے بہائی بُنِ ہر خار کے پاس

مُند گئیں کھولتے ہی کھولتے آنکھیں ہَے ہَے!

خُوب وقت آئے تم اِس عاشقِ بیمار کے پاس

مَیں بھی رُک رُک کے نہ مرتا ، جو زباں کے بدلے

دشنہ اِک تیز سا ہوتا مِرے غمخوار کے پاس

دَہَنِ شیر میں جا بیٹھیے ، لیکن اے دل

نہ کھڑے ہوجیے خُوبانِ دل آزار کے پاس

دیکھ کر تجھ کو ، چمن بسکہ نُمو کرتا ہے

خُود بخود پہنچے ہے گُل گوشۂ دستار کے پاس

مر گیا پھوڑ کے سر غالبؔ وحشی ، ہَے ہَے !

بیٹھنا اُس کا وہ ، آ کر ، تری دِیوار کے پاس

 

89۔

 

اے اسدؔ ہم خود اسیرِ رنگ و بوۓ باغ ہیں

ظاہرا صیّادِ ناداں ہے گرفتارِ ہوس

 

ش

 

90۔

 

نہ لیوے گر خسِ جَوہر طراوت سبزۂ خط سے

لگادے خانۂ آئینہ میں رُوئے نگار  آتِش

فروغِ حُسن سے ہوتی ہے حلِّ مُشکلِ عاشق

نہ نکلے شمع کے پاسے ، نکالے گرنہ خار آتش

 

ع

 

91۔

 

جادۂ رہ خُور کو وقتِ شام ہے تارِ شعاع

چرخ وا کرتا ہے ماہِ نو سے آغوشِ وداع

 

92۔

 

رُخِ نگار سے ہے سوزِ جاودانیِ شمع

ہوئی ہے آتشِ گُل آبِ زندگانیِ شمع

زبانِ اہلِ زباں میں  ہے مرگِ خاموشی

یہ بات بزم میں روشن ہوئی زبانیِ شمع

کرے ہے صِرف بہ ایمائے شعلہ قصہ تمام

بہ طرزِ اہلِ فنا ہے فسانہ خوانیِ شمع

غم اُس کو حسرتِ پروانہ کا ہے اے شعلہ*

ترے لرزنے سے ظاہر ہے ناتوانیِ شمع

ترے خیال سے رُوح اہتــزاز کرتی ہے

بہ جلوہ ریـزئ باد  و  بہ پرفشانیِ شمع

نشاطِ داغِ غمِ عشق کی بہار نہ پُوچھ

شگفتگی ہے شہیدِ گُلِ خزانیِ شمع

جلے ہے ، دیکھ کے بالینِ یار پر مجھ کو

نہ کیوں ہو دل پہ مرے داغِ بدگمانیِ شمع

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نسخۂ مہر میں" شعلہ" ، نسخہ آسی میں شعلے۔ شعلہ زیادہ صحیح ہے

 

ف

 

93۔

 

بیمِ رقیب سے نہیں کرتے وداعِ ہوش

مجبور   یاں تلک ہوئے اے اختیار ، حیف !

جلتا ہے دل کہ کیوں نہ ہم اِک بار جل گئے

اے ناتمامیِ نَفَسِ شعلہ بار حیف !

 

ک

94۔

 

زخم پر چھڑکیں کہاں طفلانِ بے پروا نمک

کیا مزا ہوتا ، اگر پتھر میں بھی ہوتا نمک

گردِ راہِ یار ہے سامانِ نازِ زخمِ دل

ورنہ ہوتا ہے جہاں میں کس قدر پیدا نمک

مجھ کو ارزانی رہے ، تجھ کو مبارک ہو جیو

نالۂ بُلبُل کا درد اور خندۂ گُل کا نمک

شورِ جولاں تھا کنارِ بحر پر کس کا کہ آج

گِردِ ساحل ہے بہ زخمِ موجۂ دریا نمک

داد دیتا ہے مرے زخمِ جگر کی ، واہ واہ !

یاد کرتا ہے مجھے ، دیکھے ہے وہ جس جا نمک

چھوڑ کر جانا تنِ مجروحِ عاشق حیف ہے

دل طلب کرتا ہے زخم اور مانگے ہیں اعضا نمک

غیر کی منت نہ کھینچوں گا پَے توفیرِ درد

زخم ، مثلِ خندۂ قاتل ہے سر تا پا نمک

یاد ہیں غالبؔ ! تُجھے وہ دن کہ وجدِ ذوق میں

زخم سے گرتا ، تو میں پلکوں سے چُنتا تھا نمک

 

95۔

 

آہ کو چاہیے اِک عُمر اثر ہونے* تک

کون جیتا ہے تری زُلف کے سر ہونے تک

دامِ ہر موج میں  ہے حلقۂ صد کامِ نہنگ

دیکھیں کیا گُزرے ہے قطرے پہ گُہر ہونے تک

عاشقی صبر طلب ، اور تمنّا بیتاب

دل کا کیا رنگ کروں خونِ جگر ہونےتک

ہم نے مانا کہ تغافل نہ کرو گے ، لیکن

خاک ہوجائیں گے ہم، تم کو خبر ہونے تک

پرتوِ خُور سے ، ہے شبنم کو فنا کی تعلیم

میں بھی ہوں ، ایک عنایت کی نظر ہونے تک    

یک نظر بیش نہیں فُرصتِ ہستی غافل !

گرمئِ بزم ہے اِک رقصِ شرر ہونے تک

غمِ ہستی کا ، اسدؔ ! کس سے ہو جُز مرگ ، علاج

شمع ہر رنگ میں جلتی ہے سحر ہونے تک

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* اکثر قدیم نسخوں میں ہوتے تک ردیف ہے۔ نسخۂ نظامی میں بھی لیکن کیوں کہ نسخۂ حمیدیہ میں مروج قرأت  ہونے تک ہی دی گئی ہے اس لۓ اسی کو قابلِ ترجیح قرار دیا گیا ہے۔

 

96۔

 

دیکھنے میں ہیں گرچہ دو، پر ہیں یہ دونوں  یار ایک

وضع میں گو ہوئی دو سر، تیغ ہے ذوالفقار ایک

ہم سخن اور ہم زباں، حضرتِ قاسسم و طباں

ایک تپش* کا جانشین، درد کی یادگار ایک

نقدِ سخن کے واسطے ایک عیارِ آگہی

شعر کے فن کے واسطے، مایۂ اعتبار ایک

ایک وفا و مہر میں تازگئِ بساطِ دہر

لطف و کرم کے باب میں زینتِ روزگار ایک

گُلکدۂ تلاش کو، ایک ہے رنگ، اک ہے بو

ریختہ کے قماش کو، پود ہے ایک، تار ایک

مملکتِ کمال میں ایک امیرِ نامور

عرصۂ قیل و قال میں، خسروِ نامدار ایک

گلشنِ اتّفاق میں ایک بہارِ بے خزاں

مے کدۂ وفاق میں بادۂ بے خمار ایک

زندۂ شوقِ شعر کو ایک چراغِ انجمن

کُشتۂ ذوقِ شعر کو شمعِ سرِ مزار ایک

دونوں کے دل حق آشنا، دونوں رسول (ص) پر فِدا

ایک مُحبِّ چار یار، عاشقِ ہشت و چار ایک

جانِ وفا پرست کو ایک شمیمِ نو بہار

فرقِ ستیزہ مست کو، ابرِ تگرگِ بار ایک

لایا ہے کہہ کے یہ غزل، شائبۂ رِیا سے دور

کر کے دل و زبان کو غالبؔ خاکسار ایک

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

*نسخے میں اگرچہ 'طپش' ہے لیکن صحیح تپش ہی درست ہونا چاہۓ

 

گ

 

97۔

 

گر تُجھ کو ہے یقینِ اجابت ، دُعا نہ مانگ

یعنی، بغیر یک دلِ بے مُدعا نہ مانگ

آتا ہے داغِ حسرتِ دل کا شمار یاد

مُجھ سے مرے گُنہ کا حساب ، اے خدا! نہ مانگ

 

ل

 

98۔

 

ہے کس قدر ہلاکِ فریبِ وفائے گُل

بُلبُل کے کاروبارپہ  ہیں خندہ ہائے گُل

آزادئ نسـیم مبارک کہ ہـر طـرف             

ٹوٹے پڑے ہیں حلقۂ دامِ ہوائے گُل

جو تھا ، سو موجِ رنگ کے دھوکے میں مر گیا

اے وائے ، نالۂ لبِ خونیں نوائے گُل !

خوش حال اُس حریفِ سیہ مست کا، کہ جو

رکھتا ہو مثلِ سایۂ گُل ، سر بہ پائے گُل

ایجاد کرتی ہے اُسے تیرے لیے بہار

میرا رقیب ہے نَفَسِ عطر سائے گُل

شرمندہ رکھتے ہیں مجھے بادِ بہار سے

میناۓ بے شراب و دلِ بے ہوائے گُل

سطوت سے تیرے جلوۂ حُسنِ غیور کی

خوں ہے مری نگاہ میں رنگِ ادائے گُل

تیرے ہی جلوے کا ہے یہ دھوکا کہ آج تک

بے اختیار دوڑے ہے گُل در قفائے گُل

غالبؔ ! مجھے ہے اُس سے ہم آغوشی آرزو

جس کا خیال  ہے گُلِ جیبِ قبائے گُل

 

م

 

99۔

 

غم نہیں ہوتا ہے آزادوں کو بیش از یک نفس

برق سے کرتے ہیں روشن، شمعِ ماتم خانہ ہم

محفلیں برہم کرے ہے گنجفہ بازِ خیال 

ہیں ورق گردانــئ نیرنگِ یک بت خانہ ہم

باوجودِ یک جہاں ہنگامہ پیرا ہی نہیں

ہیں "چراغانِ شبستانِ دلِ پروانہ" ہم

ضعف سے ہے، نے قناعت سے یہ ترکِ جستجو

ہیں "وبالِ تکیہ گاہِ ہِمّتِ مردانہ" ہم

دائم الحبس اس میں ہیں لاکھوں تمنّائیں اسدؔ

جانتے ہیں سینۂ پُر خوں کو زنداں خانہ ہم

 

100۔

 

بـہ نالہ دل بستگـی فراہــم کـر

متاعِ خانۂ زنجیر جز صدا، معلوم

 

101۔

 

مجھ کو دیارِ غیر میں مارا، وطن سے دور

رکھ لی مرے خدا نے مری بےکسی کی شرم

وہ حلقۂ ہاۓ زلف، کمیں میں ہیں اے خدا      

رکھ لیجو میرے دعوۂ وارستگی کی شرم

 

102۔

 

رسیدن گلِ باغ واماندگی ہے   
عبث محفل آراۓ رفتار ہیں ہم

تماشاۓ گلشن تماشاۓ چیدن

بہار آفرینا! گنہ گار ہیں ہم

نہ ذوقِ گریباں، نہ پرواۓ داماں

نگاہ آشناۓ گل و خار ہیں ہم

اسدؔ شکوہ  کفرِ دعا ناسپاسی

ہجومِ تمنّا سے لاچار ہیں ہم

 

ن

103۔

 

لوں وام بختِ خفتہ سے یک خوابِ خوش ولے       

غالبؔ یہ خوف ہے کہ کہاں سے ادا کروں

 

104۔

 

وہ فراق اور   وہ وصال کہاں

وہ شب  و  روز   و   ماہ  و سال کہاں

فرصتِ کاروبارِ شوق کسے

ذوقِ نظارۂ جمال کہاں

دل تو دل وہ دماغ بھی نہ رہا

شورِ سودائے خطّ و خال کہاں

تھی وہ اک شخص کے تصّور سے

اب وہ رعنائیِ خیال کہاں

ایسا آساں نہیں لہو رونا

دل میں‌طاقت، جگر میں حال کہاں

ہم سے چھوٹا "قمار خانۂ عشق"

واں جو جاویں، گرہ میں مال کہاں

فکر دنیا میں سر کھپاتا ہوں

میں کہاں اور یہ وبال کہاں

مضمحل ہو گئے قویٰ غالبؔ

وہ عناصر میں اعتدال کہاں

 

105۔

 

کی وفا ہم سے تو غیر اس کو جفا کہتے ہیں

ہوتی آئی ہے کہ اچھوں کو برا کہتے ہیں

آج ہم اپنی پریشانئِ خاطر  ان سے

کہنے جاتے تو ہیں، پر دیکھئے کیا کہتے ہیں

اگلے وقتوں کے ہیں یہ لوگ، انہیں کچھ نہ کہو

جو مے و نغمہ کو اندوہ رُبا کہتے ہیں

دل میں آ جائے ہے، ہوتی ہے جو فرصت غش سے

اور پھر کون سے نالے کو رسا کہتے ہیں

ہے پرے سرحدِ ادراک سے اپنا مسجود

قبلے کو اہلِ نظر قبلہ نما کہتے ہیں

پائے افگار پہ جب سے تجھے رحم آیا ہے

خارِ رہ کو ترے ہم مہرِ گیا کہتے ہیں

اک شرر دل میں ہے اُس سے کوئی گھبرائے گا کیا

آگ مطلوب ہے ہم کو ،جو ہَوا کہتے ہیں

دیکھیے لاتی ہے اُس شوخ کی نخوت کیا رنگ

اُس کی ہر بات پہ ہم نامِ خدا کہتے ہیں

وحشت و شیفتہ اب مرثیہ کہویں شاید

مر گیا غالبؔ آشفتہ نوا، کہتے ہیں                

 

106۔

 

آبرو کیا خاک اُس گُل کی۔ کہ گلشن میں نہیں

ہے گریبان ننگِ پیراہن جو دامن میں نہیں

ضعف سے اے گریہ کچھ باقی مرے تن میں نہیں

رنگ ہو کر اڑ گیا، جو خوں کہ دامن میں نہیں

ہو گئے ہیں جمع اجزائے نگاہِ آفتاب

ذرّے اُس کے گھر کی دیواروں کے روزن میں نہیں

کیا کہوں تاریکئِ زندانِ غم اندھیر ہے

پنبہ نورِ صبح سے کم جس کے روزن میں‌ نہیں

رونقِ ہستی ہے عشقِ خانہ ویراں ساز سے

انجمن بے شمع ہے گر برق خرمن میں نہیں

زخم سِلوانے سے مجھ پر چارہ جوئی کا ہے طعن

غیر سمجھا ہے کہ لذّت زخمِ سوزن میں نہیں

بس کہ ہیں ہم* اک بہارِ ناز کے مارے ہوُے

جلوۂ گُل کے سِوا گرد اپنے مدفن میں نہیں

قطرہ قطرہ اک ہیولیٰ ہے نئے ناسور کا

خُوں بھی ذوقِ درد سے، فارغ مرے تن میں نہیں

لے گئی ساقی کی نخوت قلزم آشامی مری

موجِ مے کی آج رگ، مینا کی گردن میں نہیں

ہو فشارِ ضعف میں کیا نا توانی کی نمود؟

قد کے جھکنے کی بھی گنجائش مرے تن میں نہیں

تھی وطن میں شان کیا غالبؔ کہ ہو غربت میں قدر

بے تکلّف، ہوں وہ مشتِ خس کہ گلخن میں نہیں

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* نسخۂ مہر اور آسی میں " ہم ہیں" درج ہے۔

 

107۔

 

عہدے سے مدِح‌ناز کے باہر نہ آ سکا

گراک ادا ہو تو اُسے اپنی قضا کہوں

حلقے ہیں چشم ہائے کشادہ بسوئے دل

ہر تارِ زلف کو نگہِ سُرمہ سا کہوں

میں، اور صد ہزار نوائے جگر خراش

تو، اور ایک وہ نہ شنیدن کہ کیا کہوں

ظالم مرے گماں سے مجھے منفعل نہ چاہ

ہَے ہَے خُدا نہ کردہ، تجھے بے وفا کہوں

 

108 ۔

 

مہرباں ہو کے بلالو مجھے، چاہو جس وقت

میں گیا وقت نہیں ہوں‌کہ پھر آ بھی نہ سکوں

ضعف میں طعنۂ اغیار کا شکوہ کیا ہے

بات کچھ سَر تو نہیں ہے کہ اٹھا بھی نہ سکوں

زہر ملتا ہی نہیں مجھ کو ستمگر، ورنہ

کیا قسم ہے ترے ملنے کی کہ کھا بھی نہ سکوں

 

109۔

 

ہم سے کھل جاؤ بوقتِ مے پرستی ایک دن

ورنہ ہم چھیڑیں گے رکھ کر عُذرِ مستی ایک دن

غرّۂِ اوجِ بِنائے عالمِ امکاں نہ ہو
اِس بلندی کے نصیبوں میں ہے پستی ایک دن

قرض کی پیتے تھے مے لیکن سمجھتے تھے کہ ہاں

رنگ لائے گی ہماری فاقہ مستی ایک دن

نغمہ ہائے غم کو ہی اے دل غنیمت جانیے

بے صدا ہو جائے گا یہ سازِ زندگی ایک دن

دَھول دَھپّا اُس سراپا ناز کا شیوہ نہیں

ہم ہی کر بیٹھے تھے غالبؔ پیش دستی ایک دن

 

110۔

 

ہم پر جفا سے ترکِ وفا کا گماں نہیں

اِک چھیڑ ہے وگرنہ مراد امتحاں نہیں

کس منہ سے شکر کیجئے اس لطف خاص کا

پرسش ہے اور پائے سخن درمیاں نہیں

ہم کو ستم عزیز، ستم گر کو ہم عزیز

نا مہرباں نہیں ہے اگر مہرباں نہیں

بوسہ نہیں، نہ دیجیے دشنام ہی سہی

آخر زباں تو رکھتے ہو تم، گر دہاں نہیں

ہر چند جاں گدازئِ قہروعتاب ہے

ہر چند پشت گرمئِ تاب و تواں نہیں

جاں مطربِ ترانہ ھَل مِن مَزِید ہے

لب پر دہ سنجِ زمزمۂِ الاَماں نہیں

خنجر سے چیر سینہ اگر دل نہ ہو دو نیم

دل میں چُھری چبھو مژہ گر خونچکاں نہیں

ہے ننگِ سینہ دل اگر آتش کدہ نہ ہو

ہے عارِدل نفس اگر آذر فشاں نہیں

نقصاں نہیں جنوں میں بلا سے ہو گھر خراب

سو گز زمیں کے بدلے بیاباں گراں نہیں

کہتے ہو کیا لکھا ہے تری سرنوشت میں

گویا جبیں پہ سجدۂ بت کا نشاں نہیں              

پاتا ہوں اس سے داد کچھ اپنے کلام کی    

رُوح القُدُس اگرچہ مرا ہم زباں نہیں

جاں ہے بہائے بوسہ ولے کیوں کہے ابھی

غالبؔ کو جانتا ہے کہ وہ نیم جاں‌نہیں

 

111۔

 

مانع دشت نوردی کوئی تدبیر نہیں

ایک چکّر ہے مرے پاؤں میں زنجیر نہیں

شوق اس دشت میں دوڑائے ہے مجھ کو،کہ جہاں

جادہ غیر از نگہِ دیدۂِ تصویر نہیں

حسرتِ لذّتِ آزار  رہی جاتی ہے

جادۂ راہِ وفا جز  دمِ شمشیر نہیں

رنجِ نو میدیِ جاوید گوارا رہیو

خوش ہوں گر نالہ زبونی کشِ تاثیر نہیں

سر کھجاتا ہے جہاں زخمِ سر اچھا ہو جائے

لذّتِ سنگ بہ اندازۂِ تقریر نہیں

جب کرم رخصتِ بیباکی و گستاخی دے

کوئی تقصیر بجُز خجلتِ تقصیر نہیں

غالبؔ اپنا یہ عقیدہ ہے بقولِ ناسخ

آپ بے بہرہ ہے جو معتقدِ میر نہیں

 

112۔

 

مت مردُمکِ دیدہ میں سمجھو یہ نگاہیں

ہیں جمع سُویداۓ دلِ چشم میں آہیں

 

113۔

 

برشکالِ* گریۂ عاشق ہے* دیکھا چاہۓ

کھِل گئی ماندِ گلُ سوَ جا سے دیوارِ چمن

اُلفتِ گل سے غلط ہے دعوئ وارستگی

سرو  ہے باوصفِ آزادی گرفتارِ چمن

ہے نزاکت بس کہ فصلِ گل میں معمارِ چمن

قالبِ گل میں ڈھلی ہے خشتِ دیوارِ چمن

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* طباطبائ میں ہے کی جگہ بھی ہے۔

 

114۔

 

عشق تاثیر سے نومید نہیں

جاں سپاری شجرِ بید نہیں

سلطنت دست بَدَست آئی ہے

جامِ مے خاتمِ جمشید نہیں

ہے تجلی تری سامانِ وجود

ذرّہ بے پر توِ خورشید نہیں

رازِ معشوق نہ رسوا ہو جائے

ورنہ مر جانے میں کچھ بھید نہیں

گردشِ رنگِ طرب سے ڈر ہے

غمِ محرومئ جاوید نہیں

کہتے ہیں جیتے ہیں اُمّید پہ لوگ

ہم کو جینے کی بھی امّید نہیں

 

115۔

 

جہاں تیرا نقشِ قدم دیکھتے ہیں

خیاباں خیاباں اِرم دیکھتے ہیں

دل آشفتگاں خالِ کنجِ دہن کے

سویدا میں سیرِ عدم دیکھتے ہیں

ترے سروِ قامت سے اک قدِ آدم

قیامت کے فتنے کو کم دیکھتے ہیں

تماشا کر اے محوِ آئینہ داری

تجھے کس تمنّا سے ہم دیکھتے ہیں

سراغِ تُفِ نالہ لے داغِ دل سے

کہ شب رَو کا نقشِ قدم دیکھتے ہیں

بنا کر فقیروں کا ہم بھیس غالبؔ

تماشائے اہلِ کرم دیکھتے ہیں

 

116۔

 

ملتی ہے خُوئے یار سے نار التہاب میں

کافر ہوں گر نہ ملتی ہو راحت عزاب میں

کب سے ہُوں۔ کیا بتاؤں جہانِ خراب میں

شب ہائے ہجر کو بھی رکھوں گر حساب میں

تا پھر نہ انتظار میں نیند آئے عمر بھر

آنے کا عہد کر گئے آئے جو خواب میں

قاصد کے آتے آتے خط اک اور لکھ رکھوں

میں جانتا ہوں جو وہ لکھیں گے جواب میں

مجھ تک کب ان کی بزم میں آتا تھا دورِ جام

ساقی نے کچھ ملا نہ دیا ہو شراب میں

جو منکرِ وفا ہو فریب اس پہ کیا چلے

کیوں بدگماں ہوں دوست سے دشمن کے باب میں

میں مضطرب ہُوں وصل میں خوفِ رقیب سے

ڈالا ہے تم کو وہم نے کس پیچ و تاب میں

میں اور حظِّ وصل خدا ساز بات ہے

جاں نذر دینی بھول گیا اضطراب میں

ہے تیوری چڑھی ہوئی اندر نقاب کے

ہے اک شکن پڑی ہوئی طرفِ نقاب میں

لاکھوں لگاؤ ایک چُرانا نگاہ کا

لاکھوں بناؤ ایک بگڑنا عتاب میں

وہ نالہ دل میں خس کے برابر جگہ نہ پائے

جس نالے سے شگاف پڑے آفتاب میں

وہ سحر مدعا طلبی میں کام نہ آئے

جس سِحر سے سفینہ رواں ہو سراب میں

غالبؔ چُھٹی شراب پر اب بھی کبھی کبھی

پیتا ہوں روزِ ابر  و شبِ ماہتاب میں

 

117۔

 

کل کے لئے کر آج نہ خسّت شراب میں

یہ سُوء ظن ہے ساقئ کوثر کے باب میں

ہیں آج کیوں ذلیل کہ کل تک نہ تھی پسند

گستاخئ فرشتہ ہماری جناب میں

جاں کیوں نکلنے لگتی ہے تن سے دمِ سماع

گر  وہ صدا سمائی ہے چنگ و رباب میں

رَو میں‌ہے رخشِ عمر، کہاں دیکھیے تھمے

نے ہاتھ باگ پر  ہے نہ پا ہے رکاب میں

اتنا ہی مجھ کو اپنی حقیقت سے بُعد ہے

جتنا کہ وہمِ غیر سے ہُوں پیچ و تاب میں

اصلِ شہود و شاہد و مشہود ایک ہے

حیراں ہوں پھر مشاہدہ ہے کس حساب میں

ہے مشتمل نمُودِ صُوَر پر وجودِ بحر

یاں کیا دھرا ہے قطرہ و موج و حباب میں

شرم اک ادائے ناز ہے اپنے ہی سے سہی

ہیں کتنے بے حجاب کہ ہیں یُوں حجاب میں

آرائشِ جمال سے فارغ نہیں ہنوز

پیشِ نظر ہے آئینہ دائم نقاب میں

ہے غیبِ غیب جس کو سمجھتے ہیں ہم شہود

ہیں‌خواب میں ہنوز، جو جاگے ہیں خواب میں

غالبؔ ندیمِ دوست سے آتی ہے بوئے دوست

مشغولِ حق ہوں، بندگئ بُو تراب میں

 

118۔

 

حیراں ہوں، دل کو روؤں کہ پیٹوں جگر کو مَیں            

مقدور ہو تو ساتھ رکھوں نوحہ گر کو مَیں

چھوڑا نہ رشک نے کہ ترے گھر کا نام لوں

ہر اک سے پُو چھتا ہوں کہ جاؤں کدھر کو مَیں

جانا پڑا رقیب کے در پر ہزار بار

اے کاش جانتا نہ تری رہ گزر کو مَیں

ہے کیا، جو کس* کے باندھیے میری بلا ڈرے       

کیا جانتا نہیں ہُوں تمھاری کمر کو مَیں

لو، وہ بھی کہتے ہیں کہ یہ بے ننگ و نام ہے

یہ جانتا اگر، تو لُٹاتا نہ گھر کو مَیں

چلتا ہوں تھوڑی دُور ہر اک تیز رَو کے ساتھ

پہچانتا نہیں ہُوں ابھی راہبر کو مَیں

خواہش کو احمقوں نے پرستش دیا قرار

کیا پُوجتا ہوں اس بُتِ بیداد گر کو مَیں

پھر بے خودی میں بھول گیا راہِ کوئے یار

جاتا وگرنہ ایک دن اپنی خبر کو مَیں

اپنے پہ کر رہا ہُوں قیاس اہلِ دہر کا

سمجھا ہوں دل پذیر متاعِ ہُنر کو میں

غالبؔ خدا کرے کہ سوارِ سمندرِ ناز

دیکھوں علی بہادرِ عالی گُہر کو میں

 

 

119۔

 

ذکر میرا بہ بدی بھی، اُسے منظور نہیں

غیر کی بات بگڑ جائے تو کچھ دُور نہیں

وعدۂِ سیرِ گلستاں ہے، خوشا طالعِ شوق

مژدۂ قتل مقدّر ہے جو مذکور نہیں

شاہدِ ہستئ مطلق کی کمر ہے عالَم

لوگ کہتے ہیں کہ ہے پر ہمیں‌منظور نہیں

قطرہ اپنا بھی حقیقت میں ہے دریا لیکن

ہم کو تقلیدِ تُنک ظرفئ منصور نہیں

حسرت! اے ذوقِ خرابی، کہ وہ طاقت نہ رہی

عشقِ پُر عربَدہ کی گوں تنِ رنجور نہیں

ظلم کر ظلم! اگر لطف دریغ آتا ہو

تُو تغافل میں‌کسی رنگ سے معذور نہیں

میں جو کہتا ہوں کہ ہم لیں گے قیامت میں تمھیں

کس رعونت سے وہ کہتے ہیں کہ ہم حور نہیں

صاف دُردی کشِ پیمانۂ جم ہیں ہم لوگ

وائے! وہ بادہ کہ افشردۂ انگور نہیں

ہُوں ظہوری کے مقابل میں خفائی غالبؔ

میرے دعوے پہ یہ حجّت ہےکہ مشہور نہیں

 

120۔

 

نالہ جُز حسنِ طلب، اے ستم ایجاد نہیں

ہے تقاضائے جفا، شکوۂ بیداد نہیں

عشق و مزدوریِ عشرت گہِ خسرو، کیا خُوب!

ہم کو تسلیم نکو نامئ فرہاد نہیں

کم نہیں وہ بھی خرابی میں، پہ وسعت معلوم

دشت میں ہے مجھے وہ عیش کہ گھر یاد نہیں

اہلِ بینش کو ہے طوفانِ حوادث مکتب

لطمۂ موج کم از سیلئِ استاد نہیں

وائے مظلومئ تسلیم! وبداحالِ وفا!

جانتا ہے کہ ہمیں طاقتِ فریاد نہیں

رنگِ تمکینِ گُل و لالہ پریشاں کیوں ہے؟

گر چراغانِ سرِ راہ گُزرِ  باد نہیں

سَبَدِ گُل کے تلے بند کرے ہے گلچیں!

مژدہ اے مرغ! کہ گلزار میں صیّاد نہیں

نفی سے کرتی ہے اثبات طراوش* گویا

دی ہی جائے دہن اس کو دمِ ایجاد نہیں

کم نہیں جلوہ گری میں ترے کوچے سے بہشت

یہی نقشہ ہے ولے، اس قدر آباد نہیں

کرتے کس منہ سے ہو غربت کی شکایت غالبؔ

تم کو بے مہرئ یارانِ وطن یاد نہیں؟

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* نسخۂ مہر میں تراوش

 

121۔

 

دونوں جہان دے کے وہ سمجھے یہ خوش رہا                

یاں آ پڑی یہ شرم کہ تکرار کیا کریں

تھک تھک کے ہر مقام پہ دو چار رہ گئے

تیرا پتہ نہ پائیں تو ناچار کیا کریں؟

کیا شمع کے نہیں ہیں ہوا خواہ اہلِ بزم؟

ہو غم ہی جاں گداز تو غم خوار کیا کریں؟

 

122۔

 

ہو گئی ہے غیر کی شیریں بیانی کارگر

عشق کا اس کو گماں ہم بے زبانوں پر نہیں

 

123۔

 

قیامت ہے کہ سن لیلیٰ کا دشتِ قیس میں آنا

تعجّب سے وہ بولا یوں بھی ہوتا ہے زمانے میں؟

دلِ نازک پہ اس کے رحم آتا ہے مجھے غالبؔ             

نہ کر سرگرم اس کافر کو اُلفت آزمانے میں

 

124۔

 

دل لگا کر لگ گیا اُن کو بھی تنہا بیٹھنا

بارے اپنی بے کسی کی ہم نے پائی داد، یاں

ہیں زوال آمادہ اجزا آفرینش کے تمام

مہرِ گردوں ہے چراغِ رہگزارِ باد، یاں

 

125۔

 

یہ ہم جو ہجر میں دیوار و در کو دیکھتے ہیں

کبھی صبا کو کبھی نامہ بر کو دیکھتے ہیں

وہ آئیں* گھر میں ہمارے خدا کی قدرت ہے       

کبھی ہم ان کو کبھی اپنے گھر کو دیکھتے ہیں

نظر لگے نہ کہیں اُس کے دست و بازو کو

یہ لوگ کیوں مرے زخمِ جگر کو دیکھتے ہیں

ترے جواہرِ طرفِ کُلہ کو کیا دیکھیں

ہم اوجِ طالعِ لعل و گہر کو دیکھتے ہیں

       

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

*نسخۂ نظامی میں آۓ

 

126۔

 

نہیں کہ مجھ کو قیامت کا اعتقاد نہیں

شبِ فراق سے روزِ جزا زیاد نہیں

کوئی کہے کہ شبِ مَہ میں کیا بُرائی ہے

بلا سے آج اگر دن کو ابر و باد نہیں

جو آؤں سامنے اُن کے تو مرحبا نہ کہیں

جو جاؤں واں سے کہیں کو تو خیر باد نہیں

کبھی جو یاد بھی آتا ہوں میں، تو کہتے ہیں

کہ آج بزم میں کچھ فتنۂ و فساد نہیں

علاوہ عید کے ملتی ہے اور دن بھی شراب

گدائے کُوچۂ مے خانہ نامراد نہیں

جہاں میں ہو غم و شادی بہم، ہمیں کیا کام ؟

دیا ہے ہم کو خدا نے وہ دل کہ شاد نہیں

تم اُن کے وعدے کا ذکر اُن سے کیوں کرو غالبؔ

یہ کیا؟ کہ تم کہو، اور وہ کہیں کہیاد نہیں

 

127۔

 

تیرے توسن کو صبا باندھتے ہیں

ہم بھی مضموں کی ہَوا باندھتے ہیں

آہ کا کس نے اثر دیکھا ہے

ہم بھی اک اپنی ہوا باندھتے ہیں

تیری فرصت کے مقابل اے عُمر!

برق کو پابہ حنا باندھتے ہیں

قیدِ ہستی سے رہائی معلوم!

اشک کو بے سروپا باندھتے ہیں

نشۂ رنگ سے ہے واشُدِ گل

مست کب بندِ قبا باندھتے ہیں

غلطی ہائے مضامیں مت پُوچھ

لوگ نالے کو رسا باندھتے ہیں

اہلِ تدبیر کی واماندگیاں

آبلوں پر بھی حنا باندھتے ہیں

سادہ پُرکار ہیں خوباں غالبؔ

ہم سے پیمانِ وفا باندھتے ہیں

 

128۔

 

زمانہ سخت کم آزار ہے، بہ جانِ اسدؔ

وگرنہ ہم تو توقعّ زیادہ رکھتے ہیں

 

129۔

 

دائم پڑا ہُوا ترے در پر نہیں ہُوں میں

خاک ایسی زندگی پہ کہ پتھر نہیں ہُوں میں

کیوں گردشِ مدام سے گبھرا نہ جائے دل

انسان ہوں پیالہ و ساغر نہیں ہُوں میں

یا رب، زمانہ مجھ کو مٹاتا ہے کس لیے؟

لوحِ جہاں پہ حرفِ مکرّر نہیں ہُوں میں

حد چاہیے سزا میں عقوبت کے واسطے

آخر گناہگار ہُوں کافَر نہیں ہُوں میں

کس واسطے عزیز نہیں جانتے مجھے؟

لعل و زمرّد و زر و گوھر نہیں ہُوں میں

رکھتے ہو تم قدم مری آنکھوں سے کیوں دریغ؟

رتبے میں مہر و ماہ سے کمتر نہیں ہُوں میں؟

کرتے ہو مجھ کو منعِ قدم بوس کس لیے؟

کیا آسمان کے بھی برابر نہیں ہُوں میں؟

غالبؔ وظیفہ خوار ہو دو شاہ کو دعا

وہ دن گئے کہ* کہتے تھے نوکر نہیں ہُوں میں

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* کچھ نسخوں میں جو

* مہر نے پانچویں۔ چھٹے اور ساتویں شعر کو نعتیہ اشعار میں شمار  کیا ہے۔

 

 

130۔

 

سب کہاں؟ کچھ لالہ و گل میں نمایاں ہو گئیں

خاک میں کیا صورتیں ہوں گی کہ پنہاں ہو گئیں!

یاد تھیں ہم کو بھی رنگارنگ بزم آرائیاں

لیکن اب نقش و نگارِ طاقِ نسیاں ہو گئیں

تھیں بنات النعشِ گردوں دن کو پردے میں نہاں

شب کو ان کے جی میں کیا آئی کہ عریاں ہو گئیں

قید میں یعقوب نے لی گو نہ یوسف کی خبر

لیکن آنکھیں روزنِ دیوارِ زنداں ہو گئیں

سب رقیبوں سے ہوں ناخوش، پر زنانِ مصر سے

ہے زلیخا خوش کہ محوِ ماہِ کنعاں ہو گئیں  

جُوئے خوں آنکھوں سے بہنے دو کہ ہے شامِ فراق

میں یہ سمجھوں گا کہ شمعیں دو فروزاں ہو گئیں

ان پری زادوں سے لیں گے خلد میں ہم انتقام

قدرتِ حق سے یہی حوریں اگر واں ہو گئیں

نیند اُس کی ہے، دماغ اُس کا ہے، راتیں اُس کی ہیں

تیری زلفیں جس کے بازو پر پریشاں ہو گئیں*

میں چمن میں کیا گیا گویا دبستاں کُھل گیا

بلبلیں سُن کر مرے نالے غزل خواں ہو گئیں

وہ نگاہیں کیوں ہُوئی جاتی ہیں یارب دل کے پار؟

جو مری کوتاہئ قسمت سے مژگاں ہو گئیں

بس کہ روکا میں نے اور سینے میں اُبھریں پَے بہ پَے

میری آہیں بخیئہ چاکِ گریباں ہو گئیں

واں گیا بھی میں تو ان کی گالیوں کا کیاجواب؟

یاد تھیں جتنی دعائیں صرفِ درباں ہو گئیں

جاں فزا ہے بادہ جس کے ہاتھ میں جام آ گیا

سب لکیریں ہاتھ کی گویا، رگِ جاں ہو گئیں

ہم موحّد ہیں ہمارا کیش ہے ترکِ رسُوم

ملّتیں جب مٹ گئیں اجزائے ایماں ہو گئیں

رنج سے خُوگر ہُوا انساں تو مٹ جاتا ہے رنج

مشکلیں مجھ پر پڑیں اتنی کہ آساں ہو گئیں

یوں ہی گر روتا رہا غالبؔ تو اے اہل جہاں

دیکھنا ان بستیوں کو تم کہ ویراں ہو گہیں

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

*حالی، یادگارِ غالبؔ میں یوں ہے: جس کے بازو پر تری زلفیں پریشاں ہو گئیں

 

131۔

 

دیوانگی سے دوش پہ زنّار بھی نہیں

یعنی ہمارے* جیب میں اک تار بھی نہیں

دل کو نیازِ حسرتِ دیدار کر چکے

دیکھا تو ہم میں طاقتِ دیدار بھی نہیں

ملنا ترا اگر نہیں آساں تو سہل ہے

دشوار تو یہی ہے کہ دشوار بھی نہیں

بے عشق عُمر کٹ نہیں سکتی ہے اور یاں

طاقت بہ قدرِلذّتِ آزار بھی نہیں

شوریدگی کے ہاتھ سے سر  ہے  وبالِ دوش

صحرا میں اے خدا کوئی دیوار بھی نہیں

گنجائشِ عداوتِ اغیار اک طرف

یاں دل میں ضعف سے ہوسِ یار بھی نہیں

ڈر نالہ ہائے زار سے میرے، خُدا کو مان

آخر نوائے مرغِ گرفتار بھی نہیں

دل میں ہے یار کی صفِ مژگاں سے روکشی

حالانکہ طاقتِ خلشِ خار بھی نہیں

اس سادگی پہ کوں نہ مر جائے اے خُدا!

لڑتے ہیں اور ہاتھ میں تلوار بھی نہیں

دیکھا اسدؔ کو خلوت و جلوت میں بارہا

دیوانہ گر نہیں ہے تو ہشیار بھی نہیں

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* جَیب، جیم پر فتح (زبر) مذکّر ہے، بمعنی گریبان۔ اردو میں جیب، جیم پر کسرہ (زیر) کے ساتھ،  بمعنی کیسہ (Pocket) استعمال میں زیادہ ہے، یہ لفظ مؤنث ہےاس باعث اکثر نسخوں میں ہماری ہے۔ قدیم املا میں یاۓ معروف ہی یاۓ مجہول (بڑی ے)کی جگہ بھی استعمال کی جاتی تھی اس لۓ یہ غلط فہمی مزید بڑھ گئی۔

 

132۔

 

نہیں ہے رخم کوئی بخیے کے درخُور مرے تن میں

ہُوا ہے تارِ اشکِ یاس، رشتہ چشمِ سوزن میں

ہُوئی ہے مانعِ ذوقِ تماشا، خانہ ویرانی

کفِ سیلاب باقی ہے برنگِ پنبہ روزن میں

ودیعت خانۂ بے دادِ کاوش ہائے مژگاں ہوں

نگینِ نامِ شاہد ہے مرا ہر قطرہ خوں تن میں

بیاں کس سے ہو ظلمت گستری میرے شبستاں کی

شبِ مہ ہو جو رکھ دیں پنبہ دیواروں کے روزن میں

نکو ہش مانعِ بے ربطئ شورِ جنوں آئی

ہُوا ہے خندہ احباب بخیہ جَیب و دامن میں

ہوئے اُس مِہر وَش کے جلوۂ تمثال کے آگے

پَرافشاں جوہرآئینے میں مثلِ ذرّہ روزن میں          

نہ جانوں نیک ہُوں یا بد ہُوں، پر صحبت مخالف ہے

جو گُل ہُوں تو ہُوں گلخن میں جو خس ہُوں تو ہُوں گلشن میں

ہزاروں دل دیئے جوشِ جنونِ عشق نے مجھ کو

سیہ ہو کر سویدا ہو گیا ہر قطرہ خوں تن میں

اسدؔ زندانئ تاثیرِ الفت ہائے خوباں ہُوں

خمِ دستِ نوازش ہو گیا ہے طوق گردن میں

 

133۔

 

مزے جہان کے اپنی نظر میں خاک نہیں

سوائے خونِ جگر، سو جگر میں خاک نہیں

مگر غبار ہُوے پر  ہَوا اُڑا لے جائے

وگرنہ تاب و تواں بال و پر میں خاک نہیں

یہ کس بہشت شمائل کی آمد آمد ہے؟

کہ غیرِ جلوۂ گُل رہ گزر میں خاک نہیں

بھلا اُسے نہ سہی، کچھ مجھی کو رحم آتا

اثر مرے نفسِ بے اثر میں خاک نہیں

خیالِ جلوۂ گُل سے خراب ہیں میکش

شراب خانے کے دیوار و در میں خاک نہیں

ہُوا ہوں عشق کی غارت گری سے شرمندہ

سوائے حسرتِ تعمیر۔ گھر میں خاک نہیں

ہمارے شعر ہیں اب صرف دل لگی کے اسدؔ

کُھلا، کہ فائدہ عرضِ ہُنر میں خاک نہیں

 

134۔

 

دل ہی تو ہے نہ سنگ و خشت، درد سے بھر نہ آئے کیوں؟

روئیں گے ہم ہزار بار ۔کوئی ہمیں ستائے کیوں؟

دَیر نہیں، حرم نہیں، در نہیں، آستاں نہیں

بیٹھے ہیں رہ گزر پہ ہم، غیر * ہمیں اُٹھائے کیوں؟

جب وہ جمالِ دل فروز، صورتِ مہرِ نیم روز

آپ ہی ہو نظارہ سوز ۔پردے میں منہ چھپائے کیوں؟

دشنۂ غمزہ  جاں ستاں، ناوکِ ناز بے پناہ

تیرا ہی عکس رُخ سہی، سامنے تیرے آئے کیوں؟      

قیدِ حیات و بندِ غم اصل میں دونوں ایک ہیں

موت سے پہلے آدمی غم سے نجات پائے کیوں؟

حسن اور اس پہ حسنِ ظن، رہ گئی بوالہوس کی شرم

اپنے پہ اعتماد ہے غیر کو آزمائے کیوں؟

واں وہ غرورِ عزّ و ناز، یاں یہ حجابِ پاس وضع

راہ میں ہم ملیں کہاں، بزم میں وہ بلائے کیوں؟

ہاں وہ نہیں خدا پرست، جاؤ  وہ بے وفا سہی

جس کو ہوں دین و دل عزیز اس کی گلی میں جائے کیوں؟

غالبؔ خستہ کے بغیر کون سے کام بند ہیں

روئیے زار زار کیا؟ کیجئے ہائے ہائے کیوں؟

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* کوئی۔ نسخۂ مہر

 

135۔

 

غنچۂ ناشگفتہ کو دور سے مت دکھا، کہ یُوں

بوسے کو پُوچھتا ہوں مَیں، منہ سےمجھے بتا کہ یُوں

پُرسشِ طرزِ دلبری کیجئے کیا؟ کہ بن کہے

اُس کے ہر اک اشارے سے نکلے ہے یہ ادا کہ یُوں

رات کے وقت مَے پیے ساتھ رقیب کو لیے

آئے وہ یاں خدا کرے، پر نہ خدا کرے کہ یُوں

غیر سے رات کیا بنی یہ جو کہا تو دیکھیے

سامنے آن بیٹھنا، اور یہ دیکھنا کہ یُوں

بزم میں اُس کے روبرو کیوں نہ خموش بیٹھیے

اُس کی تو خامُشی میں بھی ہے یہی مدّعا کہ یُوں

میں نے کہا کہ بزمِ ناز چاہیے غیر سے تہی

سُن کر ستم ظریف نے مجھ کو اُٹھا دیا کہ یُوں ؟

مجھ سے کہا جو یار نے جاتے ہیں ہوش کس طرح

دیکھ کے میری بیخودی، چلنے لگی ہوا کہ یُوں

کب مجھے کوئے یار میں رہنے کی وضع یاد تھی

آئینہ دار بن گئی حیرتِ نقشِ پا کہ یُوں

گر ترے دل میں ہو خیال، وصل میں شوق کا زوال

موجِ محیطِ آب میں مارے ہے دست و پا کہ یُوں

جو یہ کہے کہ ریختہ کیوں کر* ہو رشکِ فارسی   

گفتۂ غالبؔ ایک بار پڑھ کے اُسے سُنا کہ یُوں

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* نسخۂ مہر  میں 'کہ'

 

136۔

 

ہم بے خودئ عشق میں کر لیتے ہیں سجدے

یہ ہم سے نہ پوچھو کہ کہاں ناصِیہ سا ہیں  

       

137۔

 

اپنا احوالِ دلِ زار کہوں یا نہ کہوں

ہے حیا مانعِ اظہار۔ کہوں یا نہ کہوں

نہیں کرنے کا میں تقریر ادب سے باہر

میں بھی ہوں واقفِ اسرار ۔کہوں یا نہ کہوں

شکوہ سمجھو اسے یا کوئی شکایت سمجھو

اپنی ہستی سے ہوں بیزار۔ کہوں یا نہ کہوں

اپنے دل ہی سے میں احوالِ گرفتارئِ دل

جب نہ پاؤں کوئی غم خوار کہوں یا نہ کہوں

دل کے ہاتھوں سے، کہ ہے دشمنِ جانی اپنا

ہوں اک آفت میں گرفتار ۔کہوں یا نہ کہوں

میں تو دیوانہ ہوں اور ایک جہاں ہے غمّاز

گوش ہیں در پسِ دیوار کہوں یا نہ کہوں

آپ سے وہ مرا احوال نہ پوچھے تو اسدؔ

حسبِ حال اپنے پھر اشعار کہوں یا نہ کہوں

 

138۔

 

ممکن نہیں کہ بھول کے بھی آرمیدہ ہوں

میں دشتِ غم میں آہوۓ صیّاد دیدہ ہوں

ہوں دردمند، جبر ہو یا اختیار ہو

گہ نالۂ کشیدہ، گہ اشکِ چکیدہ ہوں

نے سُبحہ سے علاقہ نہ ساغر سے رابطہ*      

میں معرضِ مثال میں دستِ بریدہ ہوں

ہوں خاکسار پر نہ کسی سے ہو مجھ کو لاگ

نے دانۂ فتادہ ہوں ،نے دامِ چیدہ ہوں

جو چاہۓ، نہیں وہ مری قدر و منزلت

میں یوسفِ بہ قیمتِ اوّل خریدہ ہوں

ہر گز کسی کے دل میں نہیں ہے مری جگہ

ہوں میں کلامِ نُغز، ولے ناشنیدہ ہوں

اہلِ وَرَع کے حلقے میں ہر چند ہوں ذلیل     

پر عاصیوں کے زمرے** میں مَیں برگزیدہ ہوں            

ہوں گرمئ نشاطِ تصوّر سے نغمہ سنج

میں عندلیبِ گلشنِ نا آفریدہ ہوں*           

جاں لب پہ آئی تو بھی نہ شیریں ہوا دہن

از بسکہ تلخئِ غمِ ہجراں چشیدہ ہوں***   

ظاہر ہیں میری شکل سے افسوس کے نشاں

خارِ الم سے پشت بہ دنداں گزیدہ ہوں ****

پانی سے سگ گزیدہ ڈرے جس طرح اسدؔ

ڈرتا ہوں آئینے سے کہ مردم گزیدہ ہوں

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* واسطہ۔ نسخۂ مہر

** کچھ نسخوں میں 'فرقے'

*** مشہور شعر مگر نسخۂ مہر میں درج نہیں

**** یہ شعر بھی نسخۂ مہر میں درج نہیں

 

139۔

 

جس دن سے کہ ہم خستہ گرفتارِ بلا ہیں

کپڑوں میں جوئیں بخۓ کے ٹانکوں سے سوا ہیں

 

140۔

 

میر کے شعر کا احوال کہوں کیا غالبؔ

جس کا دیوان کم از گلشنِ کشمیر نہیں

 

 

141۔

 

مے کشی کو نہ سمجھ بےحاصل

بادہ غالبؔ عرقِ بید نہیں

 

142۔

 

دھوتا ہوں جب میں پینے کو اس سیم تن کے پاؤں

رکھتا ہے ضد سے کھینچ کے باہر لگن کے پاؤں

دی سادگی سے جان پڑوں کوہکن کے پاؤں

ہیہات کیوں نہ ٹوٹ گیے پیر زن کے پاؤں

بھاگے تھے ہم بہت۔ سو، اسی کی سزا ہے یہ

ہو کر اسیر دابتے ہیں راہ زن کے پاؤں

مرہم کی جستجو میں پھرا ہوں جو دور دور

تن سے سوا فِگار ہیں اس خستہ تن کے پاؤں

اللہ رے ذوقِ دشت نوردی کہ بعدِ مرگ

ہلتے ہیں خود بہ خود مرے، اندر کفن کے، پاؤں

ہے جوشِ گل بہار میں یاں تک کہ ہر طرف

اڑتے ہوئے الجھتے ہیں مرغِ چمن کے پاؤں

شب کو کسی کے خواب میں آیا نہ ہو کہیں

دکھتے ہیں آج اس بتِ نازک بدن کے پاؤں

غالبؔ مرے کلام میں کیوں کر مزہ نہ ہو

پیتا ہوں دھو کے خسروِ شیریں سخن کے پاؤں

 

و

 

143۔

 

حسد سے دل اگر افسردہ ہے، گرمِ تماشا ہو

کہ چشمِ تنگ شاید کثرتِ نظّارہ سے وا ہو

بہ قدرِ حسرتِ دل چاہیے ذوقِ معاصی بھی

بھروں یک گوشۂ دامن گر آبِ ہفت دریا ہو

اگر وہ سرو قد گرمِ خرامِ ناز آ جاوے

کفِ ہر خاکِ گلشن، شکلِ قمری، نالہ فرسا ہو

 

144۔

 

کعبے میں جا رہا، تو نہ دو طعنہ، کیا کہیں

بھولا ہوں حقِّ صحبتِ اہلِ کُنِشت کو

طاعت میں تا رہے نہ مے و انگبیں کی لاگ

دوزخ میں ڈال دو کوئی لے کر بہشت کو

ہوں منحرف نہ کیوں رہ و رسمِ ثواب سے

ٹیڑھا لگا ہے قط قلمِ سرنوشت کو

غالبؔ کچھ اپنی سعی سے لہنا* نہیں مجھے

خرمن جلے اگر نہ مَلخ کھائے کشت کو

 

145۔

 

وارستہ اس سے ہیں کہ محبّت ہی کیوں نہ ہو

کیجے ہمارے ساتھ، عداوت ہی کیوں نہ ہو

چھوڑا نہ مجھ میں ضعف نے رنگ اختلاط کا

ہے دل پہ بار، نقشِ محبّت ہی کیوں نہ ہو

ہے مجھ کو تجھ سے تذکرۂ غیر کا گلہ

ہر چند بر سبیلِ شکایت ہی کیوں نہ ہو

پیدا ہوئی ہے، کہتے ہیں، ہر درد کی دوا

یوں ہو تو چارۂ غمِ الفت ہی کیوں نہ ہو

ڈالا نہ بیکسی نے کسی سے معاملہ

اپنے سے کھینچتا ہوں خجالت ہی کیوں نہ ہو

ہے آدمی بجاۓ خود اک محشرِ خیال

ہم انجمن سمجھتے ہیں خلوت ہی کیوں نہ ہو

ہنگامۂ زبونئِ ہمّت ہے، انفعال

حاصل نہ کیجے دہر سے، عبرت ہی کیوں نہ ہو

وارستگی بہانۂ بیگانگی نہیں

اپنے سے کر، نہ غیر سے، وحشت ہی کیوں نہ ہو

مٹتا ہے فوتِ فرصتِ ہستی کا غم کوئی ؟

عمرِ عزیز صَرفِ عبادت ہی کیوں نہ ہو

اس فتنہ خو کے در سے اب اٹھتے نہیں اسدؔ

اس میں ہمارے سر پہ قیامت ہی کیوں نہ ہو

 

146۔

 

ابر روتا ہے کہ بزمِ طرب آمادہ کرو

برق ہنستی ہے کہ فرصت کوئی دم دے ہم کو

 

147۔

 

ملی نہ وسعتِ جولان یک جنون ہم کو

 عدم کو لے گۓ دل میں غبارِ صحرا کو

 

148۔

 

قفس میں ہوں گر اچّھا بھی نہ جانیں میرے شیون کو

مرا ہونا برا کیا ہے نوا سنجانِ گلشن کو

نہیں گر ہمدمی آساں، نہ ہو،  یہ رشک کیا کم ہے

نہ دی ہوتی خدا یا آرزوۓ دوست، دشمن کو

نہ نکلا آنکھ سے تیری اک آنسو اس جراحت پر

کیا سینے میں جس نے خوں چکاں مژگانِ سوزن کو

خدا شرمائے ہاتھوں کو کہ رکھتے ہیں کشاکش میں

کبھی میرے گریباں کو کبھی جاناں کے دامن کو

ابھی ہم قتل گہ کا دیکھنا آساں سمجھتے ہیں

نہیں دیکھا شناور جوۓ خوں میں تیرے توسن کو

ہوا چرچا جو میرے پاؤں کی زنجیر بننے کا

کیا بیتاب کاں میں جنبشِ جوہر نے آہن کو

خوشی کیا، کھیت پر میرے، اگر سو بار ابر آوے

سمجھتا ہوں کہ ڈھونڈے ہے ابھی سے برق خرمن کو

وفاداری بہ شرطِ استواری اصلِ ایماں ہے

مَرے بت خانے میں تو کعبے میں گاڑو برہمن کو

شہادت تھی مری قسمت میں جو دی تھی یہ خو مجھ کو

جہاں تلوار کو دیکھا، جھکا دیتا تھا گردن کو

نہ لٹتا دن کو تو کب رات کو یوں بے خبر سوتا

رہا کھٹکا نہ چوری کا دعا دیتا ہوں رہزن کو

سخن کیا کہہ نہیں سکتے کہ جویا ہوں جواہر کے

جگر کیا ہم نہیں رکھتے کہ کھودیں جا کے معدن کو

مرے شاہ سلیماں جاہ سے نسبت نہیں غالبؔ

فریدون و جم و کیخسرو  و داراب و بہمن کو

 

149۔

 

واں اس کو ہولِ دل ہے تو یاں میں ہوں شرمسار

یعنی یہ میری آہ کی تاثیر سے نہ ہو

اپنے کو دیکھتا نہیں ذوقِ ستم کو دیکھ

آئینہ تاکہ دیدۂ نخچیر سے نہ ہو

 

150۔

 

واں پہنچ کر جو غش آتا پئے ہم ہے ہم کو

صد رہ آہنگِ زمیں بوسِ قدم ہے ہم کو

دل کو میں اور مجھے دل محوِ وفا رکھتا ہے

کس قدر ذوقِ گرفتاریِ ہم ہے ہم کو

ضعف سے نقشِ پئے مور، ہے طوقِ گردن

ترے کوچے سے کہاں طاقتِ رم ہے ہم کو

جان کر کیجے تغافل کہ کچھ امّید بھی ہو

یہ نگاہِ غلط انداز تو سَم ہے ہم کو            

رشکِ ہم طرحی و دردِ اثرِ بانگِ حزیں

نالۂ مرغِ سحر تیغِ دو دم ہے ہم کو

سر اڑانے کے جو وعدے کو مکرّر چاہا

ہنس کے بولے کہ ترے سر کی قسم ہے ہم کو!

دل کے خوں کرنے کی کیا وجہ؟ ولیکن ناچار

پاسِ بے رونقیِ دیدہ اہم ہے ہم کو

تم وہ نازک کہ خموشی کو فغاں کہتے ہو

ہم وہ عاجز کہ تغافل بھی ستم ہے ہم کو

 

ق

 

لکھنؤ آنے کا باعث نہیں کھلتا یعنی

ہوسِ سیر و تماشا، سو وہ کم ہے ہم کو

مقطعِ سلسلۂ شوق نہیں ہے یہ شہر

عزمِ سیرِ نجف و طوفِ حرم ہے ہم کو

لیے جاتی ہے کہیں ایک توقّع غالبؔ

جادۂ رہ کششِ کافِ کرم ہے ہم کو

 

151۔

 

تم جانو، تم کو غیر سے جو رسم و راہ ہو

مجھ کو بھی پوچھتے رہو تو کیا گناہ ہو

بچتے نہیں مواخذۂ روزِ حشر سے

قاتل اگر رقیب ہے تو تم گواہ ہو

کیا وہ بھی بے گنہ کش و حق نا شناس* ہیں

مانا کہ تم بشر نہیں خورشید و ماہ ہو

ابھرا ہوا نقاب میں ہے ان کے ایک تار

مرتا ہوں میں کہ یہ نہ کسی کی نگاہ ہو

جب مے کدہ چھٹا تو پھر اب کیا جگہ کی قید

مسجد ہو، مدرسہ ہو، کوئی خانقاہ ہو

سنتے ہیں جو بہشت کی تعریف، سب درست

لیکن خدا کرے وہ ترا جلوہ گاہ ہو

غالبؔ بھی گر نہ ہو تو کچھ ایسا ضرر نہیں

دنیا ہو یا رب اور مرا بادشاہ ہو

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

*حق ناسپاس نسخۂ نظامی میں ہےٍ، حق نا شناس۔ حسرت، مہراور عرشی میں۔ ناسپاس کتابت کی غلطی بھی ممکن ہے۔

 

152۔

 

گئی وہ بات کہ ہو گفتگو تو کیوں کر ہو

کہے سے کچھ نہ ہوا، پھر کہو تو کیوں کر ہو

ہمارے ذہن میں اس فکر کا ہے نام وصال

کہ گر نہ ہو تو کہاں جائیں؟ ہو تو کیوں کر ہو

ادب ہے اور یہی کشمکش، تو کیا کیجے

حیا ہے اور یہی گومگو تو کیوں کر ہو

تمہیں کہو کہ گزارا صنم پرستوں کا

بتوں کی ہو اگر ایسی ہی خو تو کیوں کر ہو

الجھتے ہو تم اگر دیکھتے ہو آئینہ

جو تم سے شہر میں ہوں ایک دو تو کیوں کر ہو

جسے نصیب ہو روزِ سیاہ میرا سا

وہ شخص دن نہ کہے رات کو تو کیوں کر ہو

ہمیں پھر ان سے امید، اور انہیں ہماری قدر

ہماری بات ہی پوچھیں نہ وو تو کیوں کر ہو

غلط نہ تھا ہمیں خط پر گماں تسلّی کا

نہ مانے دیدۂ دیدار جو، تو کیوں کر ہو

بتاؤ اس مژہ کو دیکھ کر کہ مجھ کو قرار

یہ نیش ہو رگِ جاں میں فِرو تو کیوں کر ہو

مجھے جنوں نہیں غالبؔ ولے بہ قولِ حضور*

فراقِ یار میں تسکین ہو تو کیوں کر ہو

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

*حضور: بہادر شاہ ظفر، اگلا مصرعہ ظفر کا ہی ہے جس کی طرح میں غالبؔ نے درباری مشاعرے کے لۓ یہ غزل کہی تھی۔

 

153۔

 

کسی کو دے کے دل کوئی نوا سنجِ فغاں کیوں ہو

نہ ہو جب دل ہی سینے میں تو پھر منہ میں زباں کیوں ہو

وہ اپنی خو نہ چھوڑیں گے ہم اپنی وضع کیوں چھوڑیں*      

سبک سر بن کے کیا پوچھیں کہ ہم سے سر گراں کیوں ہو

کِیا غم خوار نے رسوا، لگے آگ اس محبّت کو

نہ لاوے تاب جو غم کی، وہ میرا راز داں کیوں ہو

وفا کیسی کہاں کا عشق جب سر پھوڑنا ٹھہرا

تو پھر اے سنگ دل تیرا ہی سنگِ آستاں کیوں ہو

قفس میں مجھ سے رودادِ چمن کہتے نہ ڈر ہمدم

گری ہے جس پہ کل بجلی وہ میرا آشیاں کیوں ہو

یہ کہہ سکتے ہو "ہم دل میں نہیں ہیں" پر یہ بتلاؤ

کہ جب دل میں تمہیں تم ہو تو آنکھوں سے نہاں کیوں ہو

غلط ہے جذبِ دل کا شکوہ دیکھو جرم کس کا ہے

نہ کھینچو گر تم اپنے کو، کشاکش درمیاں کیوں ہو

یہ فتنہ آدمی کی خانہ ویرانی کو کیا کم ہے

ہوئے تم دوست جس کے، دشمن اس کا آسماں کیوں ہو

یہی ہے آزمانا تو ستانا کس کو کہتے ہیں

عدو کے ہو لیے جب تم تو میرا امتحاں کیوں ہو

کہا تم نے کہ کیوں ہو غیر کے ملنے میں رسوائی

بجا کہتے ہو، سچ کہتے ہو، پھر کہیو کہ ہاں کیوں ہو

نکالا چاہتا ہے کام کیا طعنوں سے تُو غالبؔ

ترے بے مہر کہنے سے وہ تجھ پر مہرباں کیوں ہو

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* کچھ نسخوں میں وضع کیوں بدلیں ہے۔

 

154۔

 

رہیے اب ایسی جگہ چل کر جہاں کوئی نہ ہو

ہم سخن کوئی نہ ہو اور ہم زباں کوئی نہ ہو

بے در و دیوار سا اک گھر بنایا چاہیے

کوئی ہم سایہ نہ ہو اور پاسباں کوئی نہ ہو

پڑیے گر بیمار تو کوئی نہ ہو بیمار دار *

اور اگر مر جائیے تو نوحہ خواں کوئی نہ ہو

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

*قدیم لفظ بیماردار ہی تھا بعد میں لفظ تیماردار استعمال کیا جانے لگا توجدید نسخوں میں اس لفظ کو تیماردار لکھا گیا۔

 

155۔

 

بھولے سے کاش وہ ادھر آئیں تو شام ہو

کیا لطف ہو جو ابلقِ دوراں بھی رام ہو

تا گردشِ فلک سے یوں ہی صبح و شام ہو

ساقی کی چشمِ مست ہو اور دورِ جام ہو

بے تاب ہوں بلا سے، کن* آنکھوں سے دیکھ لیں           

اے خوش نصیب! کاش قضا کا پیام ہو

کیا شرم ہے، حریم ہے، محرم ہے رازدار

میں سر بکف ہوں، تیغِ ادا بے نیام ہو

میں چھیڑنے کو کاش اسے گھور لوں کہیں

پھر شوخ دیدہ بر سرِ صد انتقام ہو

وہ دن کہاں کہ حرفِ تمناّ ہو لب شناس       

ناکام، بد نصیب، کبھی شاد کام ہو

گھس پل کے چشمِ شوق قدم بوس ہی سہی

وہ بزمِ غیر ہی میں ہوں اژدہام** میں

اتنی پیوں کہ حشر میں سرشار ہی اٹھوں

مجھ پر جو چشمِ ساقئ بیت الحرام ہو

پیرانہ سال غالبؔ میکش کرے گا کیا

بھوپال میں مزید جو دو دن قیام ہو   

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* کَ ن      

** ایک املا ازدحام بھی ہے

نوٹ: غلام رسول  مہر کو اس پر شک ہے کہ یہ غزل غالبؔ کی نہیں

 

ہ

 

156۔

 

شبِ وصال میں مونس گیا ہے بَن تکیہ

ہوا ہے موجبِ آرامِ جان و تن تکیہ

خراج بادشہِ چیں سے کیوں نہ مانگوں آج؟

کہ بن گیا ہے خمِ جعدِ* پُرشکن تکیہ          

بنا ہے تختۂ گل ہاۓ یاسمیں بستر

ہوا ہے دستۂ نسرین و نسترن تکیہ

فروغِ حسن سے روشن ہے خوابگاہ تمام

جو رختِ خواب ہے پرویں، تو ہے پرن تکیہ

مزا ملے کہو کیا خاک ساتھ سونے کا

رکھے جو بیچ میں وہ شوخِ سیم تن تکیہ

اگرچہ تھا یہ ارادہ مگر خدا کا شکر

اٹھا سکا نہ نزاکت سے گلبدن تکیہ

ہوا ہے کاٹ کے چادر کو ناگہاں غائب

اگر چہ زانوۓ نل پر رکھے دمن تکیہ

بضربِ تیشہ وہ اس واسطے ہلاک ہوا

کہ ضربِ تیشہ پہ رکھتا تھا کوہکن تکیہ

یہ رات بھر کا ہے ہنگامہ صبح ہونے تک

رکھو نہ شمع پر اے اہلِ انجمن تکیہ

اگرچہ پھینک دیا تم نے دور سے لیکن

اٹھاۓ کیوں کہ یہ رنجورِ خستہ تن تکیہ

غش آ گیا جو پس از قتل میرے قاتل کو

ہوئی ہے اس کو مری نعشِ بے کفن تکیہ

شبِ فراق میں یہ حال ہے اذیّت کا

کہ سانپ فرش ہے اور سانپ کا ہے من تکیہ

روارکھونہ رکھو، تھاجو لفظ تکیہ کلام

اب اس کو کہتے ہیں اہلِ سخن "سخن تکیہ"

ہم اور تم فلکِ پیر جس کو کہتے ہیں

فقیر غالبؔ مسکیں کا ہے کہن تکیہ

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* نسخۂ مہر میں دال پر جزم ہے۔

 

157۔

 

از مہر تا بہ ذرّہ دل و دل ہے آئینہ

طوطی کو" شش جہت" سے مقابل ہے آئینہ

 

158۔

 

ہے سبزہ زار ہر در و دیوارِ غم کدہ

جس کی بہار یہ ہو پھر اس کی خزاں نہ پوچھ

ناچار بیکسی کی بھی حسرت اٹھائیے

دشوارئِ رہ و ستمِ ہمرہاں نہ پوچھ

 

159۔

 

نہ پوچھ حال اس انداز، اس عتاب کے ساتھ

لبوں پہ جان بھی آجاۓ گی جواب کے ساتھ

 

160۔

 

ہندوستان سایۂ گل پاۓ تخت تھا

جاہ و جلال عہدِ وصالِ بتاں نہ پوچھ

ہر داغِ تازہ یک دلِ داغ انتظار ہے

عرضِ فضاۓ سینۂ درد امتحاں نہ پوچھ

 

ی

 

161۔

 

صد جلوہ رو بہ رو ہے جو مژگاں اٹھائیے

طاقت کہاں کہ دید کا احساں اٹھائیے

ہے سنگ پر براتِ معاشِ جنونِ عشق

یعنی ہنوز منّتِ طفلاں اٹھائیے

دیوار بارِ منّتِ مزدور سے ہے خم

اے خانماں خراب نہ احساں اٹھائیے

یا میرے زخمِ رشک کو رسوا نہ کیجیے

یا پردۂ تبسّمِ پنہاں اٹھائیے

 

162-

 

مسجد کے زیرِ سایہ خرابات چاہیے

بھَوں پاس آنکھ قبلۂ حاجات چاہیے

عاشق ہوئے ہیں آپ بھی ایک اور شخص پر

آخر ستم کی کچھ تو مکافات چاہیے

دے داد اے فلک! دلِ حسرت پرست کی*

ہاں کچھ نہ کچھ تلافیِ مافات چاہیے

سیکھے ہیں مہ رخوں کے لیے ہم مصوّری

تقریب کچھ تو بہرِ ملاقات چاہیے

مے سے غرض نشاط ہے کس رو سیاہ کو

اک گونہ بیخودی مجھے دن رات چاہیے

ہے رنگِ لالہ و گل و نسریں جدا جدا

ہر رنگ میں بہار کا اثبات چاہیے

 

ق

 

سر پاۓ خم پہ چاہیے ہنگامِ بے خودی

رو سوۓ قبلہ وقتِ مناجات چاہیے

یعنی بہ حسبِ گردشِ پیمانۂ صفات

عارف ہمیشہ مستِ مئے ذات چاہیے

نشو و نما ہے اصل سے غالبؔ فروع کو

خاموشی ہی سے نکلے ہے جو بات چاہیے

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

*  نسخۂ مہر میں "کو"

 

163۔

 

بساطِ عجز میں تھا ایک دل یک قطرہ خوں وہ بھی

سو رہتا ہے بہ اندازِ چکیدن سر نگوں وہ بھی

رہے اس شوخ سے آزردہ ہم چندے تکلّف سے

تکلّف بر طرف، تھا ایک اندازِ جنوں وہ بھی

خیالِ مرگ کب تسکیں دلِ آزردہ کو بخشے

مرے دامِ تمنّا میں ہے اک صیدِ زبوں وہ بھی

نہ کرتا کاش نالہ مجھ کو کیا معلوم تھا ہمدم

کہ ہوگا باعثِ افزائشِ دردِ دروں وہ بھی

نہ اتنا بُرّشِ تیغِ جفا پر ناز فرماؤ

مرے دریاۓ بیتابی میں ہے اک موجِ خوں وہ بھی

مئے عشرت کی خواہش ساقیِ گردوں سے کیا کیجے

لیے بیٹھا ہے اک دو چار جامِ واژگوں وہ بھی

مرے دل میں ہے غالبؔ شوقِ وصل و شکوۂ ہجراں

خدا وہ دن کرے جو اس سے میں یہ بھی کہوں، وہ بھی

 

164۔

 

ہے بزمِ بتاں میں سخن آزردہ لبوں سے

تنگ آئے ہیں ہم ایسے خوشامد طلبوں سے

ہے دورِ قدح وجہ پریشانیِ صہبا

یک بار لگا دو خمِ مے میرے لبوں سے

رندانِ درِ مے کدہ گستاخ ہیں زاہد

زنہار نہ ہونا طرف ان بے ادبوں سے

بیدادِ وفا دیکھ کہ جاتی رہی آخر

ہر چند مری جان کو تھا ربط لبوں سے

 

165۔

 

تا ہم کو شکایت کی بھی باقی نہ رہے جا

سن لیتے ہیں گو ذکر ہمارا نہیں کرتے

غالبؔ ترا احوال سنا دینگے ہم ان کو

وہ سن کے بلا لیں یہ اجارا نہیں کرتے

 

166۔

 

گھر میں تھا کیا کہ ترا غم اسے غارت کرتا

وہ جو رکھتے تھے ہم اک حسرتِ تعمیر، سو ہے

 

167۔

 

غمِ دنیا سے گر پائی بھی فرصت سر اٹھانے کی

فلک کا دیکھنا تقریب تیرے یاد آنے کی

کھلےگا کس طرح مضموں مرے مکتوب کا یا رب

قسم کھائی ہے اس کافر نے کاغذ کے جلانے کی

لپٹنا پرنیاں میں شعلۂ آتش کا آساں ہے

ولے مشکل ہے حکمت دل میں سوزِ غم چھپانے کی

انہیں منظور اپنے زخمیوں کا دیکھ آنا تھا

اٹھے تھے سیرِ گل کو، دیکھنا شوخی بہانے کی

ہماری سادگی تھی التفاتِ ناز پر مرنا

ترا آنا نہ تھا ظالم مگر تمہید جانے کی

لکد کوبِ حوادث کا تحمّل کر نہیں سکتی

مری طاقت کہ ضامن تھی بتوں کے ناز اٹھانے کی

کہوں کیا خوبیِ اوضاعِ ابنائے زماں غالبؔ

بدی کی اس نے جس سے ہم نے کی تھی بارہا نیکی

 

168۔

 

حاصل سے ہاتھ دھو بیٹھ اے آرزو خرامی

دل جوشِ گریہ میں ہے ڈوبی ہوئی اسامی

اس شمع کی طرح سے جس کو کوئی بجھائے

میں بھی جلے ہؤوں میں ہوں داغِ نا تمامی

 

169۔

 

کیا تنگ ہم ستم زدگاں کا جہان ہے

جس میں کہ ایک بیضۂ مور آسمان ہے

ہے کائنات کو حَرَکت تیرے ذوق سے

پرتو سے آفتاب کے ذرّے میں جان ہے

حالانکہ ہے یہ سیلیِ خارا سے لالہ رنگ

غافل کو میرے شیشے پہ مے کا گمان ہے

کی اس نے گرم سینۂ اہلِ ہوس میں جا

آوے نہ کیوں پسند کہ ٹھنڈا مکان ہے

کیا خوب! تم نے غیر کو بوسہ نہیں دیا

بس چپ رہو ہمارے بھی منہ میں زبان ہے

بیٹھا ہے جو کہ سایۂ دیوارِ یار میں

فرماں رواۓ کشورِ ہندوستان ہے

ہستی کا اعتبار بھی غم نے مٹا دیا

کس سے کہوں کہ داغ جگر کا نشان ہے

ہے بارے اعتمادِ وفاداری اس قدر

غالبؔ ہم اس میں خوش ہیں کہ نا مہربان ہے

 

170۔

 

درد سے میرے ہے تجھ کو بے قراری ہائے ہائے

کیا ہوئی ظالم تری غفلت شعاری ہائے ہائے

تیرے دل میں گر نہ تھا آشوبِ غم کا حوصلہ

تو نے پھر کیوں کی تھی میری غم گساری ہائے ہائے

کیوں مری غم خوارگی کا تجھ کو آیا تھا خیال

دشمنی اپنی تھی میری دوست داری ہائے ہائے

عمر بھر کا تو نے پیمانِ وفا باندھا تو کیا

عمر کو بھی تو نہیں ہے پائداری ہائے ہائے

زہر لگتی ہے مجھے آب و ہواۓ زندگی

یعنی تجھ سے تھی اسے نا سازگاری ہائے ہائے

گل فشانی ہاۓ نازِ جلوہ کو کیا ہو گیا

خاک پر ہوتی ہے تیری لالہ کاری ہائے ہائے

شرمِ رسوائی سے جا چھپنا نقابِ خاک میں

ختم ہے الفت کی تجھ پر پردہ داری ہائے ہائے

خاک میں ناموسِ پیمانِ محبّت مل گئی

اٹھ گئی دنیا سے راہ و رسمِ یاری ہائے ہائے

ہاتھ ہی تیغ آزما کا کام سے جاتا رہا

دل پہ اک لگنے نہ پایا زخمِ کاری ہائے ہائے

کس طرح کاٹے کوئی شب‌ہاۓ تارِ برشکال

ہے نظر خو کردۂ اختر شماری ہائے ہائے

گوش مہجورِ پیام و چشم محرومِ جمال

ایک دل تِس پر یہ نا امّیدواری ہائے ہائے

عشق نے پکڑا نہ تھا غالبؔ ابھی وحشت کا رنگ

رہ گیا تھا دل میں جو کچھ ذوقِ خواری ہائے ہائے

 

171۔

 

سر گشتگی میں عالمِ ہستی سے یاس ہے

تسکیں کو دے نوید* کہ مرنے کی آس ہے

لیتا نہیں مرے دلِ آوارہ کی خبر

اب تک وہ جانتا ہے کہ میرے ہی پاس ہے

کیجے بیاں سرورِ تبِ غم کہاں تلک

ہر مو مرے بدن پہ زبانِ سپاس ہے

ہے وہ غرورِ حسن سے بیگانۂ وفا

ہرچند اس کے پاس دلِ حق شناس ہے

پی جس قدر ملے شبِ مہتاب میں شراب

اس بلغمی مزاج کو گرمی ہی راس ہے

ہر اک مکان کو ہے مکیں سے شرف اسدؔ

مجنوں جو مر گیا ہے تو جنگل اداس ہے

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* نسخۂ عرشی میں یوں ہے: تسکین کو نوید۔ اصل نظامی اور دوسرے نسخوں میں اسی طرح ہے۔

 

172۔

 

گر خامشی سے فائدہ اخفاۓ حال ہے

خوش ہوں کہ میری بات سمجھنی محال ہے

کس کو سناؤں حسرتِ اظہار کا گلہ

دل فردِ جمع و خرچِ زباں ہاۓ لال ہے

کس پردے میں ہے آئینہ پرداز اے خدا

رحمت کہ عذر خواہ لبِ بے سوال ہے

ہے ہے خدا نہ خواستہ وہ اور دشمنی

اے شوقِ منفعل! یہ تجھے کیا خیال ہے

مشکیں لباسِ کعبہ علی کے قدم سے جان

نافِ زمین ہے نہ کہ نافِ غزال ہے

وحشت پہ میری عرصۂ آفاق تنگ تھا

دریا زمین کو عرقِ انفعال ہے

ہستی کے مت فریب میں آ جائیو اسدؔ

عالم تمام حلقۂ دامِ خیال ہے

 

173۔

 

تم اپنے شکوے کی باتیں نہ کھود کھود کے* پوچھو

حذر کرو مرے دل سے کہ اس میں آگ دبی ہے

دلا یہ درد و الم بھی تو مغتنم ہے کہ آخر

نہ گریۂ سحری ہے نہ آہ نیم شبی ہے

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

*کر  ۔ نسخۂ مہر

 

174۔

 

ایک جا حرفِ وفا لکّھا تھا، سو* بھی مٹ گیا

ظاہرا کاغذ ترے خط کا غلط بردار ہے

جی جلے ذوقِ فنا کی نا تمامی پر نہ کیوں

ہم نہیں جلتے نفس ہر چند آتش بار ہے

آگ سے پانی میں بجھتے وقت اٹھتی ہے صدا

ہر کوئی در ماندگی میں نالے سے ناچار ہے

ہے وہی بد مستیِ ہر ذرّہ کا خود عذر خواہ

جس کے جلوے سے زمیں تا آسماں سرشار ہے

مجھ سے مت کہہ "تو ہمیں کہتا تھا اپنی زندگی"

زندگی سے بھی مرا جی ان دنوں بیزار ہے

آنکھ کی تصویر سر نامے پہ کھینچی ہے کہ تا

تجھ پہ کھل جاوے کہ اس کو حسرتِ دیدار ہے

۔۔۔۔۔۔

*وہ۔   نسخۂ مہر

 

175۔

 

پینس میں گزرتے ہیں جو کوچے سے وہ میرے

کندھا بھی کہاروں کو بدلنے نہیں دیتے

 

176۔

 

مری ہستی فضاۓ حیرت آبادِ تمنّا ہے

جسے کہتے ہیں نالہ وہ اسی عالم کا عنقا ہے

خزاں کیا فصلِ گل کہتے ہیں کس کو؟ کوئی موسم ہو

وہی ہم ہیں، قفس ہے، اور ماتم  بال و پر کا ہے

وفاۓ دلبراں ہے اتّفاقی ورنہ اے ہمدم

اثر فریادِ دل ہاے حزیں کا کس نے دیکھا ہے

نہ لائی* شوخئ اندیشہ تابِ رنجِ نومیدی

کفِ افسوس ملنا عہدِ تجدیدِ تمنّا ہے

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* نہ لائے (نسخۂ مہر)

 

177۔

 

رحم کر ظالم کہ کیا بودِ چراغِ کشتہ ہے

نبضِ بیمارِ وفا دودِ چراغِ کشتہ ہے

دل لگی کی آرزو بے چین رکھتی ہے ہمیں

ورنہ یاں بے رونقی سودِ چراغِ کشتہ ہے

 

178۔

 

چشمِ خوباں خامشی میں بھی نوا پرداز ہے

سرمہ تو کہوے کہ دودِ شعلہ آواز ہے

پیکرِ عشّاق سازِ طالعِ نا ساز ہے

نالہ گویا گردشِ سیّارہ کی آواز ہے

دست گاہِ دیدۂ خوں بارِ مجنوں دیکھنا

یک بیاباں جلوۂ گل فرشِ پا انداز ہے

 

179۔

 

عشق مجھ کو نہیں وحشت ہی سہی

میری وحشت تری شہرت ہی سہی

قطع کیجے نہ تعلّق ہم سے

کچھ نہیں ہے تو عداوت ہی سہی

میرے ہونے میں ہے کیا رسوائی

اے وہ مجلس نہیں خلوت ہی سہی

ہم بھی دشمن تو نہیں ہیں اپنے

غیر کو تجھ سے محبّت ہی سہی

اپنی ہستی ہی سے ہو جو کچھ ہو

آگہی گر نہیں غفلت ہی سہی

عمر ہر چند کہ ہے برق خرام

دل کے خوں کرنے کی فرصت ہی سہی

ہم کوئی ترکِ وفا کرتے ہیں

نہ سہی عشق مصیبت ہی سہی

کچھ تو دے اے فلکِ نا انصاف

آہ و فریاد کی رخصت ہی سہی

ہم بھی تسلیم کی خو ڈالیں گے

بے نیازی تری عادت ہی سہی

یار سے چھیڑ چلی جائے اسدؔ

گر نہیں وصل تو حسرت ہی سہی

 

180۔

 

ہے آرمیدگی میں نکوہش بجا مجھے

صبحِ وطن ہے خندۂ دنداں نما مجھے

ڈھونڈے ہے اس مغنّیِ آتش نفس کو جی

جس کی صدا ہو جلوۂ برقِ فنا مجھے

مستانہ طے کروں ہوں رہِ وادیِ خیال

تا باز گشت سے نہ رہے مدّعا مجھے

کرتا ہے بسکہ باغ میں تو بے حجابیاں

آنے لگی ہے نکہتِ گل سے حیا مجھے

کھلتا کسی پہ کیوں مرے دل کا معاملہ

شعروں کے انتخاب نے رسوا کیا مجھے

 

181۔

 

زندگی اپنی جب اس شکل سے گزری غالبؔ

ہم بھی کیا یاد کریں گے کہ خدا رکھتے تھے

 

 

182۔

 

اس بزم میں مجھے نہیں بنتی حیا کیے

بیٹھا رہا اگرچہ اشارے ہوا کیے

دل ہی تو ہے سیاستِ درباں سے ڈر گیا

میں اور جاؤں در سے ترے بِن صدا کیے

رکھتا پھروں ہوں خرقہ و سجّادہ رہنِ مے

مدّت ہوئی ہے دعوتِ آب و ہوا کیے

بے صرفہ ہی گزرتی ہے، ہو گرچہ عمرِ خضر

حضرت بھی کل کہیں گے کہ ہم کیا کیا کیے

مقدور ہو تو خاک سے پوچھوں کہ اے* لئیم

تو نے وہ گنج‌ہاۓ گرانمایہ کیا کیے

کس روز تہمتیں نہ تراشا کیے عدو ؟

کس دن ہمارے سر پہ نہ آرے چلا کیے ؟

صحبت میں غیر کی نہ پڑی ہو کہیں یہ خو

دینے لگا ہے بوسہ بغیر التجا کیے

ضد کی ہے اور بات مگر خو بری نہیں

بھولے سے اس نے سینکڑوں وعدے وفا کیے

غالبؔ تمہیں کہو کہ ملے گا جواب کیا

مانا کہ تم کہا کیے اور  وہ سنا کیے

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* او۔  نسخۂ مہر

 

183۔

 

رفتارِ عمر قطعِ رہ اضطراب ہے

اس سال کے حساب کو برق آفتاب ہے

میناۓ مے ہے سروِ نشاطِ بہار سے

بالِ تَدَر و* جلوۂ موجِ شراب ہے

زخمی ہوا ہے پاشنہ پاۓ ثبات کا

نے بھاگنے کی گوں، نہ اقامت کی تاب ہے

جادادِ بادہ نوشیِ رنداں ہے شش جہت

غافل گماں کرے ہے کہ گیتی خراب ہے

نظّارہ کیا حریف ہو اس برقِ حسن کا

جوشِ بہار جلوے کو جس کے نقاب ہے

میں نامراد دل کی تسلّی کو کیا کروں

مانا کہ تیری رخ سے نگہ کامیاب ہے

گزرا اسدؔ مسرّتِ پیغامِ یار سے

قاصد پہ مجھ کو رشکِ سوال و جواب ہے

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* تذرو اور تدرو دونوں طرح لکھا جاتاہے۔ نسخۂ مہر

 

184۔

 

دیکھنا قسمت کہ آپ اپنے پہ رشک آ جائے ہے

میں اسے دیکھوں، بھلا کب مجھ سے دیکھا جائے ہے

ہاتھ دھو دل سے یہی گرمی گر اندیشے میں ہے

آبگینہ تندئِ صہبا سے پگھلا جائے ہے

غیر کو یا رب وہ کیوں کر منعِ گستاخی کرے

گر حیا بھی اس کو آتی ہے تو شرما جائے ہے

شوق کو یہ لت کہ ہر دم نالہ کھینچے جائیے

دل کی وہ حالت کہ دم لینے سے گھبرا جائے ہے

دور چشمِ بد تری بزمِ طرب سے واہ واہ

نغمہ ہو جاتا ہے واں گر نالہ میرا جائے ہے

گرچہ ہے طرزِ تغافل پردہ دارِ  رازِ عشق

پر ہم ایسے کھوئے جاتے ہیں کہ وہ پا جائے ہے

اس کی بزم آرائیاں سن کر دلِ رنجور، یاں

مثلِ نقشِ مدّعاۓ غیر بیٹھا جائے ہے

ہو کے عاشق وہ پری رخ اور نازک بن گیا

رنگ کھُلتا جائے ہے جتنا کہ اڑتا جائے ہے            

نقش کو اس کے مصوّر پر بھی کیا کیا ناز ہیں

کھینچتا ہے جس قدر اتنا ہی کھنچتا جائے ہے

سایہ میرا مجھ سے مثلِ دود بھاگے ہے اسدؔ

پاس مجھ آتش بجاں کے کس سے ٹھہرا جائے ہے

 

185۔

 

گرمِ فریاد رکھا شکلِ نہالی نے مجھے

تب اماں ہجر میں دی بردِ لیالی نے مجھے

نسیہ و نقدِ دو عالم کی حقیقت معلوم

لے لیا مجھ سے مری ہمّتِ عالی نے مجھے

کثرت آرائیِ وحدت ہے پرستارئ وہم

کر دیا کافر ان اصنامِ خیالی نے مجھے

ہوسِ گل کے تصوّر میں بھی کھٹکا نہ رہا

عجب آرام دیا بے پر و بالی نے مجھے

 

186۔

 

کار گاہ ہستی میں لالہ داغ ساماں ہے

برقِ خرمنِ راحت، خونِ گرمِ دہقاں ہے

غنچہ تا شگفتن ہا برگِ عافیت معلوم

باوجودِ دل جمعی خوابِ گل پریشاں ہے

ہم سے رنجِ بیتابی کس طرح اٹھایا جائے

داغ پشتِ دستِ عجز، شعلہ خس بہ دنداں ہے

 

187۔

 

اگ رہا ہے در و دیوار سے سبزہ غالبؔ

ہم بیاباں میں ہیں اور گھر میں بہار آئی ہے

 

188۔

 

سادگی پر اس کی، مر جانے کی حسرت دل میں ہے               

بس نہیں چلتا کہ پھر خنجر کفِ قاتل میں ہے

دیکھنا تقریر کی لذّت کہ جو اس نے کہا

میں نے یہ جانا کہ گویا یہ بھی میرے دل میں ہے

گرچہ ہے کس کس برائی سے ولے با ایں ہمہ

ذکر میرا مجھ سے بہتر ہے کہ اس محفل میں ہے

بس ہجومِ نا امیدی خاک میں مل جائے گی

یہ جو اک لذّت ہماری سعئِ بے حاصل میں ہے

رنجِ رہ کیوں کھینچیے؟ واماندگی کو عشق ہے

اٹھ نہیں سکتا ہمارا جو قدم منزل میں ہے

جلوہ زارِ آتشِ دوزخ ہمارا دل سہی

فتنۂ شورِ قیامت کس کی آب و گِل میں ہے

ہے دلِ شوریدۂ غالبؔ طلسمِ پیچ و تاب

رحم کر اپنی تمنّا پر کہ کس مشکل میں ہے

 

189۔

 

دل سے تری نگاہ جگر تک اتر گئی

دونوں کو اک ادا میں رضامند کر گئی

شق ہو گیا ہے سینہ، خوشا لذّتِ فراغ

تکلیفِ پردہ داریِ زخمِ جگر گئی

وہ بادۂ شبانہ کی سر مستیاں کہاں

اٹھیے بس اب کہ لذّتِ خوابِ سحر گئی

اڑتی پھرے ہے خاک مری کوۓ یار میں

بارے اب اے ہوا! ہوسِ بال و پر گئی                

دیکھو تو دل فریبـئ اندازِ نقشِ پا

موجِ خرامِ یار بھی کیا گل کتر گئی

ہر بو‌الہوس نے حسن پرستی شعار کی

اب آبروۓ شیوہ اہلِ نظر گئی

نظّارے نے بھی کام کِیا واں نقاب کا

مستی سے ہر نگہ ترے رخ پر بکھر گئی

فردا و دی کا تفرِقہ یک بار مٹ گیا

کل تم گئے کہ ہم پہ قیامت گزر گئی

مارا زمانے نے اسدؔاللہ خاں تمہیں

وہ ولولے کہاں وہ جوانی کدھر گئی

 

190۔

 

تسکیں کو ہم نہ روئیں جو ذوقِ نظر ملے

حورانِ خلد میں تری صورت مگر ملے

اپنی گلی میں مجھ کو نہ کر دفن بعدِ قتل

میرے پتے سے خلق کو کیوں تیرا گھر ملے

ساقی گری کی شرم کرو آج، ورنہ ہم

ہر شب پیا ہی کرتے ہیں مے جس قدر ملے

تجھ سے تو کچھ کلام نہیں لیکن اے ندیم

میرا سلام کہیو اگر نامہ بر ملے

تم کو بھی ہم دکھائیں کہ مجنوں نے کیا کِیا

فرصت کشاکشِ غمِ پنہاں سے گر ملے

لازم نہیں کہ خضر کی ہم پیروی کریں

جانا* کہ اک بزرگ ہمیں ہم سفر ملے

اے ساکنانِ کوچۂ دل دار دیکھنا

تم کو کہیں جو غالبؔ آشفتہ سر ملے

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* دیوانِ غالبؔ ( فرہنگ کے ساتھ) میں "مانا" ہے۔

 

191۔

 

کوئی دن گر زندگانی اور ہے

اپنے جی میں ہم نے ٹھانی اور ہے

آتشِ دوزخ میں یہ گرمی کہاں

سوزِ غم ہاۓ نہانی اور ہے

بارہا دیکھی ہیں ان کی رنجشیں

پر کچھ اب کے سر گرانی اور ہے

دے کے خط منہ دیکھتا ہے نامہ بر

کچھ تو پیغامِ زبانی اور ہے

قاطعِ اعمار ہیں اکثر نجوم

وہ بلاۓ آسمانی اور ہے

ہو چکیں غالبؔ بلائیں سب تمام

ایک مرگِ ناگہانی اور ہے

 

192۔

 

کوئی امّید بر نہیں آتی

کوئی صورت نظر نہیں آتی

موت کا ایک دن معین ھے

نیند کیوں رات بھر نہیں آتی؟

آگے آتی تھی حال دل پہ ہنسی

اب کسی بات پر نہیں آتی

جانتا ہوں ثوابِ طاعت و زہد

پر طبعیت ادھر نہیں آتی

ہے کچھ ایسی ہی بات جو چپ ہوں

ورنہ کیا بات کر نہیں آتی

کیوں نہ چیخوں کہ یاد کرتے ہیں

میری آواز گر نہیں آتی

داغِ دل گر نظر نہیں آتا

بو بھی اے چارہ گر نہیں آتی

ہم وہاں ہیں جہاں سے ہم کو بھی

کچھ ہماری خبر نہیں آتی

مرتے ہیں آرزو میں مرنے کی

موت آتی ہے پر نہیں آتی

کعبے کس منہ سے جاؤ گے غالبؔ

شرم تم کو مگر نہیں آتی

 

193۔

 

دلِ ناداں تجھے ہوا کیا ہے؟

آخر اس درد کی دوا کیا ہے؟

ہم ہیں مشتاق اور وہ بےزار

یا الٰہی یہ ماجرا کیا ہے؟

میں بھی منہ میں زبان رکھتا ہوں

کاش پوچھو کہ مدّعا کیا ہے

 

ق

 

جب کہ تجھ بن نہیں کوئی موجود

پھر یہ ہنگامہ اے خدا کیا ہے؟

یہ پری چہرہ لوگ کیسے ہیں؟

غمزہ و عشوہ و ادا کیا ہے؟

شکنِ زلفِ عنبریں کیوں ہے*

نگہِ چشمِ سرمہ سا کیا ہے؟

سبزہ و گل کہاں سے آئے ہیں؟

ابر کیا چیز ہے؟ ہوا کیا ہے؟

ہم کو ان سے وفا کی ہے امّید

جو نہیں جانتے وفا کیا ہے؟

ہاں بھلا کر ترا بھلا ہوگا

اَور درویش کی صدا کیا ہے؟

جان تم پر نثار کرتا ہوں

میں نہیں جانتا دعا کیا ہے؟

میں نے مانا کہ کچھ نہیں غالبؔ

مفت ہاتھ آئے تو برا کیا ہے

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* ہیں۔ نسخۂ مہر

 

194۔

 

کہتے تو ہو تم سب کہ بتِ غالیہ مو آئے

یک مرتبہ گھبرا کے کہو کوئی "کہ وو آئے"

ہوں کشمکشِ نزع میں ہاں جذبِ محبّت

کچھ کہہ نہ سکوں، پر وہ مرے پوچھنے کو آئے

ہے صاعقہ و شعلہ و سیماب کا عالم

آنا ہی سمجھ میں مری آتا نہیں، گو آئے

ظاہر ہے کہ گھبرا کے نہ بھاگیں گے نکیرین

ہاں منہ سے مگر بادۂ دوشینہ کی بو آئے

جلاّد سے ڈرتے ہیں نہ واعظ سے جھگڑتے

ہم سمجھے ہوئے ہیں اسے جس بھیس میں جو آئے

ہاں اہلِ طلب! کون سنے طعنۂ نا یافت

دیکھا کہ وہ ملتا نہیں اپنے ہی کو کھو آئے

اپنا نہیں وہ شیوہ کہ آرام سے بیٹھیں

اس در پہ نہیں بار تو کعبے ہی کو ہو آئے

کی ہم نفسوں نے اثرِ گریہ میں تقریر

اچّھے رہے آپ اس سے مگر مجھ کو ڈبو آئے

اس انجمنِ ناز کی کیا بات ہے غالبؔ

ہم بھی گئے واں اور تری تقدیر کو رو آئے

 

195۔

 

پھر کچھ اک دل کو بیقراری ہے

سینہ جویاۓ زخمِ کاری ہے

پھِر جگر کھودنے لگا ناخن

آمدِ فصلِ لالہ کاری ہے

قبلۂ مقصدِ نگاہِ نیاز

پھر وہی پردۂ عماری ہے

چشم دلاّلِ جنسِ رسوائی

دل خریدارِ ذوقِ خواری ہے

وُہ ہی* صد رنگ نالہ فرسائی           

وُہ ہی* صد گونہ اشک باری ہے

دل ہواۓ خرامِ ناز سے پھر

محشرستانِ بیقراری ہے

جلوہ پھر عرضِ ناز کرتا ہے

روزِ بازارِ جاں سپاری ہے

پھر اسی بے وفا پہ مرتے ہیں

پھر وہی زندگی ہماری ہے

 

۔ق۔

 

پھر کھلا ہے درِ عدالتِ ناز

گرم بازارِ فوجداری ہے

ہو رہا ہے جہان میں اندھیر

زلف کی پھر سرشتہ داری ہے

پھر دیا پارۂ جگر نے سوال

ایک فریاد و آہ و زاری ہے

پھر ہوئے ہیں گواہِ عشق طلب

اشک باری کا حکم جاری ہے

دل و مژگاں کا جو مقدمہ تھا

آج پھر اس کی روبکاری ہے

بے خودی بے سبب نہیں غالبؔ

کچھ تو ہے جس کی پردہ داری ہے

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* نسخۂ مہر  و آسی میں " وُہی"

 

196۔

 

جنوں تہمت کشِ تسکیں نہ ہو گر شادمانی کی

نمک پاشِ خراشِ دل ہے لذّت زندگانی کی

کشاکش‌ ہاۓ ہستی سے کرے کیا سعیِ آزادی

ہوئی زنجیر، موجِ* آب کو فرصت روانی کی        

پس از مردن بھی دیوانہ زیارت گاہ طفلاں ہے

شرارِ سنگ نے تربت پہ میری گل فشانی کی

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* نسخۂ طاہر میں " زنجیرِ موجِ آب"

 

197۔

 

نِکوہِش ہے سزا فریادئِ بیدادِ دِلبر کی

مبادا خندۂ دنداں نما ہو صبح محشر کی

رگِ لیلیٰ کو خاکِ دشتِ مجنوں ریشگی بخشے

اگر بو دے بجاۓ دانہ دہقاں نوک نشتر کی

پرِ پروانہ شاید بادبانِ کشتئ مے تھا

ہوئی مجلس کی گرمی سے روانی دَورِ ساغر کی

کروں بیدادِ ذوقِ پَر فشانی عرض کیا قدرت

کہ طاقت اُڑ گئی، اڑنے سے پہلے، میرے شہپر کی

کہاں تک روؤں اُس کے خیمے کے پیچھے، قیامت ہے!

مری قسمت میں یا رب کیا نہ تھی دیوار پتھّر کی؟

 

198۔

 

بے اعتدالیوں سے سبُک سب میں ہم ہوئے

جتنے زیادہ ہو گئے اتنے ہی کم ہوئے

پنہاں تھا دام  سخت قریب* آشیان کے

اڑنے نہ پائے تھے کہ گرفتار ہم ہوئے

ہستی ہماری اپنی فنا پر دلیل ہے

یاں تک مٹے کہ آپ ہم اپنی قَسم ہوئے

سختی کشانِ عشق کی پوچھے ہے کیا خبر

وہ لوگ رفتہ رفتہ سراپا الم ہوئے

تیری وفا سے کیا ہو تلافی؟ کہ دہر میں

تیرے سوا بھی ہم پہ بہت سے ستم ہوئے

لکھتے رہے جنوں کی حکایاتِ خوں چکاں

ہر چند اس میں ہاتھ ہمارے قلم ہوئے

اللہ ری تیری تندئ خو جس کے بیم سے

اجزاۓ نالہ دل میں مرے رزقِ ہم ہوئے

اہلِ ہوس کی فتح ہے ترکِ نبردِ عشق

جو پاؤں اٹھ گئے وہی ان کے علم ہوئے

نالے عدم میں چند ہمارے سپرد تھے

جو واں نہ کھنچ سکے سو وہ یاں آ کے دم ہوئے

چھوڑی اسدؔ نہ ہم نے گدائی میں دل لگی

سائل ہوئے تو عاشقِ اہلِ کرم ہوئے

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* نسخۂ حمیدیہ اور مالک رام میں " دامِ سخت قریب"

 

199۔

 

جو نہ نقدِ داغِ دل کی کرے شعلہ پاسبانی

تو فسردگی نہاں ہے بہ کمینِ بے زبانی

مجھے اس سے کیا توقّع بہ زمانۂ جوانی

کبھی کودکی میں جس نے نہ سنی مری کہانی

یوں ہی دکھ کسی کو دینا نہیں خوب ورنہ کہتا

کہ مرے عدو کو یا رب ملے میری زندگانی

 

200۔

 

ظلمت کدے میں میرے شبِ غم کا جوش ہے

اک شمع ہے دلیلِ سحر سو خموش ہے

نے مژدۂ وصال نہ نظّارۂ جمال

مدّت ہوئی کہ آشتئ چشم و گوش ہے

مے نے کِیا ہے حسنِ خود آرا کو بے حجاب

اے شوق یاں اجازتِ تسلیمِ ہوش ہے

گوہر کو عقدِ گردنِ خوباں میں دیکھنا

کیا اوج پر ستارۂ گوہر فروش ہے

دیدار بادہ، حوصلہ ساقی، نگاہ مست

بزمِ خیال مے کدۂ بے خروش ہے

 

۔ق۔

 

اے تازہ واردانِ بساطِ ہواۓ دل

زنہار اگر تمہیں ہوسِ ناۓ و نوش ہے

دیکھو مجھے! جو دیدۂ عبرت نگاہ ہو

میری سنو! جو گوشِ نصیحت نیوش ہے

ساقی بہ جلوہ دشمنِ ایمان و آگہی

مطرب بہ نغمہ رہزنِ تمکین و ہوش ہے

یا شب کو دیکھتے تھے کہ ہر گوشۂ بساط

دامانِ باغبان و کفِ گل فروش ہے

لطفِ خرامِ ساقی و ذوقِ صداۓ چنگ

یہ جنّتِ نگاہ  وہ  فردوسِ گوش ہے

یا صبح دم جو دیکھیے آ کر تو بزم میں

نے وہ سرور و سوز* نہ جوش و خروش ہے

داغِ فراقِ صحبتِ شب کی جلی ہوئی

اک شمع رہ گئی ہے سو وہ بھی خموش ہے

آتے ہیں غیب سے یہ مضامیں خیال میں

غالبؔ صریرِ خامہ نواۓ سروش ہے

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* نسخۂ آگرہ 1863ء اور نسخۂ مہر میں سور

 

201۔

 

آ، کہ مری جان کو قرار نہیں ہے

طاقتِ بیدادِ انتظار نہیں ہے

دیتے ہیں جنّت حیاتِ دہر کے بدلے

نشّہ بہ اندازۂ خمار نہیں ہے

گِریہ نکالے ہے تیری بزم سے مجھ کو

ہائے کہ رونے پہ اختیار نہیں ہے

ہم سے عبث ہے گمانِ رنجشِ خاطر

خاک میں عشّاق کی غبار نہیں ہے

دل سے اٹھا لطفِ جلوہ‌ہاۓ معانی

غیرِ گل آئینۂ بہار نہیں ہے

قتل کا میرے کیا ہے عہد تو بارے

وائے اگر عہد استوار نہیں ہے

تو نے قسم مے کشی کی کھائی ہے غالبؔ

تیری قسم کا کچھ اعتبار نہیں ہے

 

202۔

 

میں انہیں چھیڑوں اور کچھ نہ کہیں

چل نکلتے جو مے پیے ہوتے

قہر ہو یا بلا ہو جو کچھ ہو

کاشکے تم مرے لیے ہوتے

میری قسمت میں غم گر اتنا تھا

دل بھی یا رب کئی دیے ہوتے

آ ہی جاتا وہ راہ پر غالبؔ

کوئی دن اور بھی جیے ہوتے

 

203۔

 

ہجومِ غم سے یاں تک سر نگونی مجھ کو حاصل ہے

کہ تارِ دامن و تارِ نظر میں فرق مشکل ہے

رفوۓ زخم سے مطلب ہے لذّت زخمِ سوزن کی

سمجھیو مت کہ پاسِ درد سے دیوانہ غافل ہے

وہ گل جس گلستاں میں جلوہ فرمائی کرے غالبؔ

چٹکنا غنچۂ گل کا صداۓ خندۂ دل ہے

 

204۔

 

پا بہ دامن ہو رہا ہوں بسکہ میں صحرا نورد

خارِ پا ہیں جوہرِ آئینۂ زانو مجھے

دیکھنا حالت مرے دل کی ہم آغوشی کے وقت*

ہے نگاہِ آشنا تیرا سرِ ہر مو مجھے

ہوں سراپا سازِ آہنگِ شکایت کچھ نہ پوچھ

ہے یہی بہتر کہ لوگوں میں نہ چھیڑے تو مجھے

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* نسخۂ مہرمیں " ہم آغوشی کے بعد"

 

205۔

 

جس بزم میں تو ناز سے گفتار میں آوے

جاں کالبدِ صورتِ دیوار میں آوے

سائے کی طرح ساتھ پھریں سرو  و  صنوبر

تو اس قدِ دلکش سے جو گلزار میں آوے

تب نازِ گراں مایگئ اشک بجا ہے

جب لختِ جگر دیدۂ خوں بار میں آوے

دے مجھ کو شکایت کی اجازت کہ ستمگر

کچھ تجھ کو مزہ بھی مرے آزار میں آوے

اس چشمِ فسوں گر کا اگر پائے اشارہ

طوطی کی طرح آئینہ گفتار میں آوے

کانٹوں کی زباں سوکھ گئی پیاس سے یا رب

اک آبلہ پا وادیِ پر خار میں آوے

مر جاؤں نہ کیوں رشک سے جب وہ تنِ نازک

آغوشِ خمِ حلقۂ زُنّار میں آوے

غارت گرِ ناموس نہ ہو گر ہوسِ زر

کیوں شاہدِ گل باغ سے بازار میں آوے

تب چاکِ گریباں کا مزا ہے دلِ نالاں*

جب اک نفس الجھا ہوا ہر تار میں آوے

آتش کدہ ہے سینہ مرا رازِ نہاں سے

اے وائے اگر معرضِ اظہار میں آوے

گنجینۂ معنی کا طلسم اس کو سمجھیے

جو لفظ کہ غالبؔ مرے اشعار میں آوے

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* مالک رام اور عرشی میں ہے دلِ ناداں لیکن نالاں ہی غالبؔ کے اندازِ بیان کے مطابق زیادہ درست معلوم ہوتا ہے۔

 

206۔۔

 

حسنِ مہ گرچہ بہ ہنگامِ کمال اچّھا ہے

اس سے میرا مہِ خورشید جمال اچّھا ہے

بوسہ دیتے نہیں اور دل پہ ہے ہر لحظہ نگاہ

جی میں کہتے ہیں کہ مفت آئے تو مال اچّھا ہے

اور بازار سے لے آئے اگر ٹوٹ گیا

ساغرِ جم سے مرا جامِ سفال اچّھا ہے

بے طلب دیں تو مزہ اس میں سوا ملتا ہے

وہ گدا جس کو نہ ہو خوۓ سوال اچّھا ہے

ان کے دیکھے سے جو آ جاتی ہے منہ پر رونق

وہ سمجھتے ہیں کہ بیمار کا حال اچّھا ہے

دیکھیے پاتے ہیں عشّاق بتوں سے کیا فیض

اک برہمن نے کہا ہے کہ یہ سال اچّھا ہے

ہم سخن تیشے نے فرہاد کو شیریں سے کیا

جس طرح کا کہ* کسی میں ہو کمال اچّھا ہے

قطرہ دریا میں جو مل جائے تو دریا ہو جائے

کام اچّھا ہے وہ، جس کا کہ مآل اچّھا ہے

خضر سلطاں کو رکھے خالقِ اکبر سر سبز

شاہ کے باغ میں یہ تازہ نہال اچّھا ہے

ہم کو معلوم ہے جنّت کی حقیقت لیکن

دل کے خوش رکھنے کو غالبؔ یہ خیال اچّھا ہے

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* نسخۂ مہر میں "جس طرح کا بھی"

 

207۔

 

نہ ہوئی گر مرے مرنے سے تسلّی نہ سہی

امتحاں اور بھی باقی ہو تو یہ بھی نہ سہی

خار خارِ المِ حسرتِ دیدار تو ہے

شوق گلچینِ گلستانِ تسلّی نہ سہی

مے پرستاں خمِ مے منہ سے لگائے ہی بنے

ایک دن گر نہ ہوا بزم میں ساقی نہ سہی

نفسِ قیس کہ ہے چشم و چراغِ صحرا

گر نہیں شمعِ سیہ خانۂ لیلی نہ سہی

ایک ہنگامے پہ* موقوف ہے گھر کی رونق

نوحۂ غم ہی سہی نغمۂ شادی نہ سہی

نہ ستائش کی تمنّا نہ صلے کی پروا

گر نہیں ہیں مرے اشعار میں معنی؟ نہ سہی

عشرتِ صحبتِ خوباں ہی غنیمت سمجھو

نہ ہوئی غالبؔ اگر عمرِ طبیعی نہ سہی

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

* نسخۂ مہر میں "پر"

 

208۔

 

عجب نشاط سے جلاّد کے چلے ہیں ہم آگے

کہ اپنے سائے سے سر پاؤں سے ہے دو قدم آگے

قضا نے تھا مجھے چاہا خرابِ بادۂ الفت

فقط خراب لکھا، بس نہ چل سکا قلم آگے

غمِ زمانہ نے جھاڑی نشاطِ عشق کی مستی

وگرنہ ہم بھی اٹھاتے تھے لذّتِ الم آگے

خدا کے واسطے داد اس جنونِ شوق کی دینا

کہ اس کے در پہ پہنچتے ہیں نامہ بر سے ہم آگے

یہ عمر بھر جو پریشانیاں اٹھائی ہیں ہم نے

تمہارے آئیو اے طرّہ‌ ہاۓ خم بہ خم آگے

دل و جگر میں پَر افشاں جو ایک موجۂ خوں ہے

ہم اپنے زعم میں سمجھے ہوئے تھے اس کو دم آگے

قسم جنازے پہ آنے کی میرے کھاتے ہیں غالبؔ

ہمیشہ کھاتے تھے جو میری جان کی قسم آگے

 

209۔

 

شکوے کے نام سے بے مہر خفا ہوتا ہے

یہ بھی مت کہہ کہ جو کہیے تو گِلا ہوتا ہے

پُر ہوں میں شکوے سے یوں، راگ سے جیسے باجا

اک ذرا چھیڑیے پھر دیکھیے کیا ہوتا ہے

گو سمجھتا نہیں پر حسنِ تلافی دیکھو

شکوۂ جور سے سر گرمِ جفا ہوتا ہے

عشق کی راہ میں ہے چرخِ مکوکب کی وہ چال

سست رو جیسے کوئی آبلہ پا ہوتا ہے

کیوں نہ ٹھہریں ہدفِ ناوکِ بیداد کہ ہم

آپ اٹھا لاتے ہیں گر تیر خطا ہوتا ہے

خوب تھا پہلے سے ہوتے جو ہم اپنے بد خواہ

کہ بھلا چاہتے ہیں اور برا ہوتا ہے

نالہ جاتا تھا پرے عرش سے میرا اور اب

لب تک آتا ہے جو ایسا ہی رسا ہوتا ہے

 

۔ق۔

 

خامہ میرا کہ وہ ہے باربُدِ بزمِ سخن

شاہ کی مدح میں یوں نغمہ سرا ہوتا ہے

اے شہنشاہِ کواکب سپہ و مہرِ علم

تیرے اکرام کا حق کس سے ادا ہوتا ہے

سات اقلیم کا حاصل جو فراہم کیجے

تو وہ لشکر کا ترے نعل بہا ہوتا ہے

ہر مہینے میں جو یہ بدر سے ہوتا ہے ہلال

آستاں پر ترے مہ ناصیہ سا ہوتا ہے

میں جو گستاخ ہوں آئینِ غزل خوانی میں

یہ بھی تیرا ہی کرم ذوق فزا ہوتا ہے

رکھیو غالبؔ مجھے اس تلخ نوائی میں معاف

آج کچھ درد مرے دل میں سوا ہوتا ہے

 

210۔

 

ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے

تمہیں کہو کہ یہ اندازِ گفتگو کیا ہے

نہ شعلے میں یہ کرشمہ نہ برق میں یہ ادا

کوئی بتاؤ کہ وہ شوخِ تند خو کیا ہے

یہ رشک ہے کہ وہ ہوتا ہے ہم سخن تم سے

وگرنہ خوفِ بد آموزیِ عدو کیا ہے

چپک رہا ہے بدن پر لہو سے پیراہن

ہمارے جَیب کو اب حاجتِ رفو کیا ہے

جلا ہے جسم جہاں، دل بھی جل گیا ہوگا

کریدتے ہو جو  اب راکھ جستجو کیا ہے

رگوں میں دوڑتے پھرنے کے ہم نہیں قائل

جب آنکھ سے ہی* نہ ٹپکا تو پھر لہو کیا ہے

وہ چیز جس کے لیے ہم کو ہو بہشت عزیز

سواۓ بادۂ گلفامِ مشک بو** کیا ہے

پیوں شراب اگر خم بھی دیکھ لوں دو چار

یہ شیشہ و قدح و کوزہ و سبو کیا ہے

رہی نہ طاقتِ گفتار اور اگر ہو بھی

تو کس امید پہ کہیے کہ آرزو کیا ہے

ہوا ہے شہ کا مصاحب پھرے ہے اتراتا

وگرنہ شہر میں غالبؔ کی آبرو کیا ہے

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 * اصل نسخے میں جب آنکھ سے ہی ہے لیکن بعض جدید نسخوں میں جب آنکھ ہی سے رکھا گیا ہے جس سے مطلب زیادہ واضح ہو جاتا ہے لیکن نظامی میں یوں ہی ہے۔

** "بادہ و گلفامِ مشک بو"۔ نسخۂ مہر

 

211۔

 

غیر لیں محفل میں بوسے جام کے

ہم رہیں یوں تشنہ لب پیغام کے

خستگی کا تم سے کیا شکوہ کہ یہ

ہتھکنڈے ہیں چرخِ نیلی فام کے

خط لکھیں گے گرچہ مطلب کچھ نہ ہو

ہم تو عاشق ہیں تمہارے نام کے

رات پی زمزم پہ مے اور صبح دم

دھوئے دھبّے جامۂ احرام کے

دل کو آنکھوں نے پھنسایا کیا مگر

یہ بھی حلقے ہیں تمہارے دام کے

شاہ کی ہے غسلِ صحّت کی خبر

دیکھیے کب دن پھریں حمّام کے

عشق نے غالبؔ نکمّا کر دیا

ورنہ ہم بھی آدمی تھے کام کے

 

212۔

 

پھر اس انداز سے بہار آئی

کہ ہوئے مہر و مہ تماشائی

دیکھو اے ساکنانِ خطّۂ خاک

اس کو کہتے ہیں عالم آرائی

کہ زمیں ہو گئی ہے سر تا سر

رو کشِ سطحِ چرخِ مینائی

سبزے کو جب کہیں جگہ نہ ملی

بن گیا روۓ آب پر کائی

سبزہ و گل کے دیکھنے کے لیے

چشمِ نرگس کو دی ہے بینائی

ہے ہوا میں شراب کی تاثیر

بادہ نوشی ہے باد پیمائی

کیوں نہ دنیا کو ہو خوشی غالبؔ

شاہِ دیں دار* نے شفا پائی

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

*اصل نسخے میں املا ہے د&#